اللہ تعالیٰ کو کیسے راضی کریں

اس تحریر میں ہم بات کریں گے کہ اللہ تعالیٰ کو کیسے راضی کریں۔ اللہ تعالیٰ کو راضی کرنے کا بہترین طریقہ کیا ہے؟ اللہ تعالیٰ کو راضیٰ کرنے کا بہترین طریقہ توبہ ہے۔ حدیث شریف میں ہے۔

Is tehreer mein hum baat karen ge ke Allah taala ko kaise raazi karen. Allah taala ko raazi karne ka behtareen tarika kya hai? Allah Taala ko raazi karne ka behtareen tarika Tauba hai. Hadees shareef mein hai.

حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ رسول اللہﷺ نے ارشاد فرمایا: ’’ اللہ تعالیٰ اپنے بندہ کی توبہ سے (جبکہ وہ اس کی بارگاہ میں توبہ کرتا ہے) اُس سے بھی زیادہ خوش ہوتے ہیں جتنی خوشی تم میں سے کسی مسافر کو اپنے اُس (سواری کے ) اونٹ کے مل جانے سے ہوتی ہے جس پر وہ چٹیل بیابان میں سفر کررہا ہو، اُسی پر اس کے کھانے پینے کا سامان بندھا ہو اور (اتفاق سے) وہ اونٹ اسکے ہاتھ سے چھوٹ کر بھاگ جائے اور وہ (اس کو ڈھونڈتے ڈھونڈتے) مایوس ہوجائے اور اسی مایوسی کے عالم میں (تھکا ہارا بھوکا پیاسا) کسی درخت کے سایہ کے نیچے لیٹ جائے اور اسی حالت میں (اس کی آنکھ لگ جائے اور جب آنکھ کھلے تو) اچانک اس اونٹ کو اپنے پاس کھڑا ہوا پائے اور (جلدی سے) اس کی نکیل پکڑ لے اور خوشی کے جوش میں (زبان اس کے قابو میں نہ رہے اور اللہ تعالیٰ کا شکر ادا کرنے کی غرض سے) کہنے لگے! اے اللہ! تو میرا بندہ اور میں تیرا رب ہوں (خوشی کے مارے اسے پتہ بھی نہ چلے کہ میں کیا کہہ گیا)(مسلم ، کتاب التوبۃ ، باب فی الحض علی التوبۃ والفرح بہا)۔

Hazrat Ans bin Maalik (RA) rivayet karte hain ke Rasool Allah (SAW ne irshad farmaya: Allah taala apne bandah ki tauba se (jabkay woh is ki bargaah mein tauba karta hai) us se bhi ziyada khush hotay hain jitni khushii tum mein se kisi musafir ko apne us (sawari ke) oont ke mil janay se hoti hai jis par woh chatail biyabaan mein safar kar raha ho, usi par is ke khane peenay ka samaan bandha ho aur (ittafaq se) woh oont uskay haath se chhuut kar bhaag jaye aur woh (is ko dhoondtay dhoondtay) mayoos ho jaye aur isi mayoosi ke aalam mein (thaka haara bhooka piyasa) kisi darakht ke saya ke neechay late jaye aur isi haalat mein (is ki aankhh lag jaye aur jab aankhh khulay to) achanak is oont ko apne paas khara huwa paye aur (jaldi se) is ki nakeel pakar le aur khushii ke josh mein (zabaan is ke qaboo mein na rahay aur Allah taala ka shukar ada karne ki gharz se) kehnay lagey! Ae Allah ! To mera bandah aur mein tera Rab hon (khushii ke maaray usay pata bhi na chalay ke mein kya keh gaya)

بندہ کی توبہ سے اللہ تعالیٰ کی ذات اس لئے خوش ہوتی ہے کہ اُس کا ایک بھٹکا ہوا بندہ اپنی نادانی سے شیطان کے فریب میں آکر اس کی عبادت کی راہ سے بھٹک گیا تھا، راہ راست پر آ گیا ہے۔

Banday ki tauba se Allah taala ki zaat is liye khush hoti hai ke uss ka aik bhatka huwa bandah apni nadani se shetan ke faraib mein aa kar is ki ibadat ki raah se bhatak gaya tha, raah raast par aa gaya hai.

بندہ کی توبہ واستغفار سے اللہ تعالیٰ کی شان میں کوئی اضافہ نہیں ہوتا ۔ وہ بڑا ہے اور بڑا ہی رہے گا۔ وہ بے نیاز ہے، اسے ہماری ضرورت نہیں لیکن ہم اس کے محتاج ہیں۔ اس کی کوئی نظیر نہیں۔ وہ پوری کائنات کا خالق و مالک و رازق ہے۔ اللہ تعالیٰ سے توبہ واستغفار کرنے کا فائدہ ہمیں ہی پہنچتا ہے۔

Bandah ki tauba o astghfar se Allah taala ki shaan mein koi izafah nahi hota. Woh bara hai aur bara hi rahay ga. Woh be-niaz hai, usay hamari zaroorat nahi lekin hum is ke mohtaaj hain. Is ki koi nazeer nahi. Woh poori kaayenaat ka khaaliq o maalik o Razaq hai. Allah taala se tauba o astghfar karne ka faida hamein hi pohanchana hai.

لہذا اللہ تعالیٰ کو راضی کرنے کے لئے سچے دل سے توبہ استغفار کریں۔ کیونکہ کہتے ہیں کہ رب راضی تو سب راضی۔ اللہ کو راضی کرنے کے لئے صرف توبہ کرنا ضروری نہیں بلکہ آئندہ گناہ نہ کرنے کا پختہ ارادہ کرنا بھی ضروری ہے۔

Lehaza Allah taala ko raazi karne ke liye sachey dil se tauba astaghfar karen. Kyunkay kehte hain ke rab raazi to sab raazi. Allah ko raazi karne ke liye sirf tauba karna zurori nahi balkay aindah gunah na karne ka pukhta iradah karna bhi zurori hai.

یاد رکھیں توبہ کرنے سے اللہ تعالیٰ تو راضی ہو جاتے ہیں لیکن اگر گناہ کا تعلق حقوق العباد سے ہے تو پہلے بندوں سے معافی طلب کی جائے۔ پھر اللہ تعالیٰ کی طرف توبہ کے لئے رجوع کیا جائے۔

Yaad rakhen tauba karne se Allah taala to raazi ho jatay hain lekin agar gunah ka talluq haqooq al ebaad se hai to pehlay bundon se maffi talabb ki jaye. Phir Allah taala ki taraf tauba ke liye rujoo kya jaye.

توبہ کی تعریف: توبہ کے معنیٰ لوٹنے کے ہیں۔ اللہ تعالیٰ کی نافرمانی سے فرمانبرداری کی طرف لوٹنا شریعت اسلامیہ میں’’ توبہ‘‘ کہلاتا ہے۔

Tauba ki tareef : Tauba ke means lotney ke hain. Allah taala ki nafarmani se farmabardari ki taraf lootna shariat islamia mein Tauba kehlata hai.

اگر آپ کو یہ تحریر اچھی لگی ہے تو آپ کا حق بنتا ہے کہ اس پوسٹ کو سوشل میڈیا پر اپنے دوستوں کے ساتھ شیئر کریں تا کہ ان کی بھی بہتر طور پر رہنمائی ہو سکے۔

شیئر کریں