عقیقہ کرنے کا مسنون طریقہ

کسی کو جب اللہ تعالیٰ بچے سے نوازے تو ولادت کے ساتویں روز یا چودہویں یا اکیسویں دن، اگر ان دنوں میں نہ ہو سکے تو عمر بھر جب بھی موقع میسر آئے بچہ کی طرف سے اللہ کے نام جانور ذبح کرنے کا نام شریعت میں ”عقیقہ“ ہے۔

Kisi ko jab Allah taala bache se nawaze to wiladat ke satwen (7th) roz ya chodhween (14th) ya ikeeswen (21th) din, agar in dinon mein na ho sake to umar bhar jab bhi mauqa muyassar aeye bacha ki taraf se Allah ke naam janwar zibah karne ka naam Shariat mein ”Aqeeqah“ hai.

عقیقہ سنت ہے، اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے نواسوں حضرت حسن اور حضرت حسین رضی اللہ عنہما کی طرف سے عقیقہ فرمایا تھا، ایک حدیث میں ہے کہ ”عقیقہ“ کی برکت سے بچہ کے اوپر سے بلائیں ٹلتی ہیں، اگر لڑکا پیدا ہو تو دو بکرے (یا بڑے جانور میں دو حصے) اور لڑکی پیدا ہو تو ایک بکرا (یا بڑے جانوروں میں ایک حصہ) ذبح کرنا مستحب ہے۔

Aqeeqa sunnat hai, Allah ke Rasool (SAW) ne apne nawason Hazrat Hasan aur Hazrat Hussain (RA) ki taraf se aqeeqa farmaya tha, aik hadees mein hai ke ”Aqeeqah“ ki barket se bacha ke oopar se bulain talti hain, agar larka peda ho to do bakray (ya barray janwar mein do hissay) aur larki peda ho to aik bakra (ya barray janwaron mein aik hissa) zibah karna mustahib hai.

عقیقہ کا کوئی خاص طریقہ نہیں ہے جس طرح بطور قربانی جانور ذبح کیا جاتا ہے اسی طرح عقیقہ میں بھی ذبح کیا جائے گا، عقیقہ میں بھی انھیں جانور کو ذبح کرنا درست ہے جنھیں قربانی میں ذبح کرنا درست ہے، یعنی اونٹ، گائے، بھینس، بکری، بھیڑ اور دنبہ وغیرہ۔

Aqeeqa koi khaas tarika nahi hai jis tarah bator qurbani janwar zibah kya jata hai isi tarah aqeeqa mein bhi zibah kya jaye ga, aqeeqa mein bhi unhein janwar ko zibah karna durust hai jinhen qurbani mein zibah karna durust hai, yani Oont, Gaaye, Bhens, Bakri, Bhair aur Dunba waghera.

عقیقے کا سب سے اچھا وقت پیدائش سے ساتویں دن ہے، پھر چودہویں دن، پھر اکیسویں، اگر ان دنوں میں بھی نہ کرسکے تو عمر بھر میں کسی بھی دن عقیقہ کیا جا سکتا ہے۔

Aqeeqay ka sab se acha waqt paidaiesh se satwen din hai, phir chodhween din, phir ikeeswen, agar in dinon mein bhi na kar sakay to Umar bhar mein kisi bhi din aqeeqa kya ja sakta hai.

عقیقہ کے لئے ایسے جانور کا انتخاب کیا جائے تو قربانی کی تمام شرائط رکھتا ہو۔ یعنی اس میں کوئی عیب نہ ہو، کمزور نہ ہو۔روایت میں ہے کہ مستحب ہے ساتویں دن بچے کا عقیقہ کیا جائے نہیں تو انسان آخری دم تک اپنا عقیقہ خود کروا سکتا ہے۔

Aqeeqah ke liye aisay janwar ka intikhab kya jaye to qurbani ki tamam sharait rakhta ho. Yani is mein koi aib na ho, kamzor na ho. Rivayet mein hai ke mustahib hai satwen din bache ka aqeeqa kya jaye nahi to insan aakhri dam tak apna aqeeqa khud karwa sakta hai.

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا: ہر بچہ،بچی اپنا عقیقہ ہونے تک گروی ہے۔ اس کی جانب سے ساتویں دن جانور ذبح کیا جائے، اس دن اس کا نام رکھا جائے اور سر منڈوایا جائے۔ ترمذی ، ابن ماجہ ، نسائی ، مسند احمد۔

Rasool Allah (SAW) ne irshad farmaya : har bacha, bachi apna aqeeqah honay tak girwi hai. Is ki janib se satwen din janwar zibah kya jaye, is din is ka naam rakha jaye aur sir mandwaya jaye.

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا: لڑکے کی جانب سے دو بکریاں اور لڑکی کی جانب سے ایک بکری ہے۔ ترمذی ، مسند احمد

Rasool Allah (SAW) ne irshad farmaya : larke ki janib se do bakriyan aur larki ki janib se aik bakri hai.

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلمنے ارشاد فرمایا : لڑکے کی جانب سے دو بکرے اور لڑکی کی جانب سے ایک بکرا ہے۔ عقیقہ کے جانور مذکر ہوں یا مئونث، اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا۔ یعنی بکرا یا بکری جو جی چاہے ذبح کر دیں۔ ترمذی ، مسند احم

Rasool Allah (SAW) ne irshad farmaya : larke ki janib se do bakray aur larki ki janib se aik bakra hai. Aqeeqa ke janwar muzakar hon ya moonas, is se koi farq nahi parta. Yani Bakra ya Bakri jo jee chahay zibah kar den.

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلمنے اپنے نواسے حضرت حسن اور حضرت حسین کا عقیقہ ساتویں دن کیا، اسی دن ان کا نام رکھا ، اور حکم دیا کہ ان کے سروں کے بال مونڈھ دیئے جائیں۔ ابو داود

Rasool Allah (SAW) apne nwase Hazrat Hasan (RA) aur Hazrat Hussain (RA) ka aqeeqa satwen din kya, isi din un ka naam rakha, aur hukum diya ke un ke suron ke baal mondh diye jayen.

درج بالا اور دیگر احادیث کی روشنی میں علماء کرام فرماتے ہیں کہ بچہ، بچی کی پیدائش کے ساتویں دن عقیقہ کرنا ، بال منڈوانا ، نام رکھنا اور ختنہ کروانا سنت ہے۔

Darj bala aur deegar ahadees ki roshni mein ulama karaam farmatay hain ke bacha, bachi ki paidaiesh ke satwen din aqeeqa karna, baal mndwana, naam rakhna aur khatna karwana sunnat hai.

لہذا باپ کی ذمہ داری ہے کہ اگر وہ اپنے نومولود بچہ، بچی کا عقیقہ کرنے کی استطاعت رکھتا ہے تو وہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی اس سنت کو ضرور زندہ کرے تاکہ اجر عظیم کا مستحق بنے اور اس کے نومولود بچہ/ بچی کو اللہ کے حکم سے بعض آفتوں اور بیماریوں سے راحت مل سکے، نیز کل قیامت کے دن بچہ/ بچی کی شفاعت کا مستحق بن سکے۔

Lehaza baap ki zimma daari hai ke agar wo apne nomolood bacha, bachi ka aqeeqa karne ki istetat rakhta hai to wo Nabi Akram (SAW) ki is Sunnat ko zaroor zindah kere taakay ajar azeem ka mustahiq banay aur is ke nomolood bacha / bachi ko Allah ke hukum se baaz aafton aur bimarion se raahat mil sakay, neez kal qayamat ke din bacha / bachi ki Shafaat ka mustahiq ban sakay.

اگر آپ کو یہ تحریر اچھی لگی ہے تو آپ کا حق بنتا ہے کہ اس پوسٹ کو سوشل میڈیا پر اپنے دوستوں کے ساتھ شیئر کریں تا کہ ان کی بھی بہتر طور پر رہنمائی ہو سکے۔

شیئر کریں