غصہ کیا ہے

غصہ آنا انسان کی اور اس پر قابو پانا مومن کی نشانی ہے۔ غصہ حماقت سے شروع ہوکر ندامت پر ختم ہوتا ہے۔ غصہ کرنا دوسرے کی غلطی کی سزا خود کو دینا ہے۔

Gussa kya hai?

Gussa aana insan ki aur is par qaboo paana momin ki nishani hai. Gussa hamaqat se shuru hokar nedamat par khatam hota hai. Gussa karna dosray ki ghalti ki saza khud ko dena hai.

غصے کے وقت صحیح فیصلہ لینا یا سوچنا سمجھنا اس لیے بھی مشکل ہو جاتا ہے چونکہ غصہ بن بلائے آتا ہے اور ذہن کو کچھ دیر کے لیے سن کردیتا ہے۔

Ghusse ke waqt sahih faisla lena ya sochna samjhna is liye bhi mushkil ho jata hai chunkay gussa ban bulaye aata hai aur zehan ko kuch der ke liye sun kar deta hai.

غصے کا منفی انداز میں اظہار بعض اوقات پریشانی کا سبب بن جاتا ہے ، خاص طور پر تب جب اس سے کسی کو نقصان پہنچنے یا کسی کے جذبات مجروح ہونے کا خطرہ ہو۔

Ghusse ka manfi andaaz mein izhaar baaz auqaat pareshani ka sabab ban jata hai, khaas tor par tab jab is se kisi ko nuqsaan pounchanay ya kisi ke jazbaat majrooh honay ka khatrah ho.

غصہ وہ چیز ہے جس سے انسان کے اندر سخت ہیجان پیدا ہوتا ہے۔ چہرہ سرخ ہوجاتا ہے۔ دل کی دھڑکن بڑھ جاتی ہے ، نبض کی رفتار تیز ہوجاتی ہے ، سانس چڑھنے لگتی ہے حتی کہ ایک سنجیدہ و خوبصورت انسان خوفناک اور وحشت ناک شکل اختیار کرلیتا ہے۔

Gussa wo cheez hai jis se insan ke andar sakht hejaan peda hota hai. Chehra surkh hojata hai. Dil ki dharkan barh jati hai, nabz ki raftaar taiz ho jati hai, saans charhne lagti hai hatta ke aik sanjeeda o khobsorat insan khofnaak aur wehshat naak shakal ikhtiyar karleta hai.

صرف یہی نہیں غصے کے وجہ سے انسان ایسی حرکات کر بیٹھتا ہے جو اس کے لئے ہلاکت و بربادی کا سبب بن جاتی ہیں۔

Sirf yahi nahi ghusse ke wajah se insan aisi harkaat kar baithta hai jo is ke liye halakat o barbadi ka sabab ban jati hain.

انسان کتنا ہی بڑا کیوں نہ ہو جائے اندر سے بچہ ہی رہتا ہے، اس وجہ سے وہ بچوں کی طرح چاہتا ہے کہ ہر چیز ان کی مرضی کے مطابق ہو اور جب ایسا نہیں ہوتا تو وہ غصے میں آ جاتے ہے۔ آج کے دور میں لوگوں میں قوت برداشت بہت کم ہو گئی ہے۔ جس کی وجہ سے انہیں چھوٹی چھوٹی باتوں پہ غصہ آ جاتا ہے۔

Insan kitna hi bara kyun na ho jaye andar se bacha hi rehta hai, is wajah se wo bachon ki tarah chahta hai ke har cheez un ki marzi ke mutabiq ho aur jab aisa nahi hota to wo ghusse mein aa jatay hai. Aaj ke daur mein logon mein qouvat bardasht bohat kam ho gayi hai. Jis ki wajah se inhen choote choote baton pay gussa aa jata hai.

اگر کوئی آپ کو دھوکہ دے، آپ کو نقصان پہنچانے کی کوشش کرئے،یا آپ کو بنا کسی وجہ کے تنقید کا نشانہ بنائے تو آپ کو غصہ آنے لگتا ہے۔ غصے کا تعمیری انداز میں اظہار اکثر مشکل ہو جاتا ہے کیونکہ غصہ کے وقت انسان جذبات میں بہہ کر صحیح اور غلط کی تمیز بھول جاتا ہے اور اس کا غصہ معاملات کو بہتر بنانے کے بجائے ان کے بگاڑ کا سبب بن جاتا ہے ۔

Agar koi aap ko dhoka day, aap ko nuqsaan pohanchanay ki koshish krye, ya aap ko bana kisi wajah ke tanqeed ka nishana banaye to aap ko gussa anay lagta hai. Ghusse ka tameeri andaaz mein izhaar aksar mushkil ho jata hai kyunkay gussa ke waqt insan jazbaat mein beh kar sahih aur ghalat ki tameez bhool jata hai aur is ka gussa mamlaat ko behtar bananay ke bajaye un ke bigaar ka sabab ban jata hai.

غصے نہ کرؤ، کیونکہ قابل سے قابل آدمی کو بھی بے وقوف بنادیتا ہے۔ کہتے ہیں کہ انسان کی عقل کا اندازہ غصے کی حالت میں لگانا چاہیے۔

Ghusse na karo, kyunkay qabil se qabil aadmi ko bhi be waqoof bnadita hai. Kehte hain ke insan ki aqal ka andaza ghusse ki haalat mein lagana chahiye.

لوگ کہتے ہیں کہ انھیں تب غصہ آتا ہے جب کوئی غلط بات یا کام ہو۔ لیکن، بات تو تب ہے کہ کوئی گاڑی اونچے نیچے راستوں پر بھی اچھی چلے کیونکہ ہموار سڑک پر تو ہر گاڑی اچھی چلتی ہی ہے۔

Log kehte hain ke unhein tab gussa aata hai jab koi ghalat baat ya kaam ho. Lekin, baat to tab hai ke koi gaari ounchay neechay raastoon par bhi achi chalay kyunkay hamwar sarrak par to har gaari achi chalti hi hai.

یاد رکھیں غصہ بہترین دوستی اور مضبوط ترین ناتوں کو نیست و نابوط کر دیتا ہے۔ اس سے حد درجہ پرہیز کرو۔

Yaad rakhen gussa behtareen dosti aur mazboot tareen naaton ko naist o naboot kar deta hai. Is se had daraja parhaiz karo.

غصے میں بولے ہوئے الفاظ کسی کا بھی دل دکھاتے ہیں، لوگوں کی دل آزاری کرتے ہیں۔ وقت کے ساتھ ساتھ غصہ تو ختم ہو جاتا ہے مگر اس سے ہم دوسروں کو جو چوٹ لگاتے ہیں وہ ان سوراخوں کی طرح ان کے دل پر ہمیشہ اپنے نشان چھوڑ دیتی ہے۔

Ghusse mein bolay hue alfaaz kisi ka bhi dil dikhata hain, logon ki dil aazari karte hain. Waqt ke sath sath gussa to khatam ho jata hai magar is se hum dosaron ko jo chout lagatay hain wo in sorakhon ki tarah un ke dil par hamesha apne nishaan chor deti hai.

اگر آپ کو یہ تحریر اچھی لگی ہے تو آپ کا حق بنتا ہے کہ اس پوسٹ کو سوشل میڈیا پر اپنے دوستوں کے ساتھ شیئر کریں تا کہ ان کی بھی بہتر طور پر رہنمائی ہو سکے۔

شیئر کریں