حمل روکنے کے دیسی طریقے

بچوں میں مناسب وقفہ رکھنے کی وجہ سے بعض لوگوں کی خواہش ہوتی ہے کہ حمل نہ ٹھہرے۔ بعض اوقات ایسا ہوتا ہے کہ عورت کو اگر حمل ٹھہر جائے تو اس کے مرنے کا خطرہ ہوتا ہے۔ یا پھر کسی اور مجبوری کے تحت حمل کو روکنا ہوتا ہے۔

Bachon mein munasib waqfa rakhnay ki wajah se baaz logon ki khwahish hoti hai ke hamal na thehray. Baaz auqaat aisa hota hai ke aurat ko agar hamal thehr jaye to is ke marnay ka khatrah hota hai. Ya phir kisi aur majboori ke tehat hamal ko rokna hota hai.

یوں تو حمل روکنے کے بے شمار طریقے ہیں تاہم زیادہ تر لوگ ڈاکٹروں اور حکیموں کے پاس جانے کے بجائے دیسی طریقوں پر انحصار کرتے ہیں۔ اس تحریر میں ہم آپ کو بتائیں گے کہ حمل روکنے کے دیسی طریقے کون کون سے ہیں اور ان کو کیسے استعمال کرنا ہے۔

Yun to hamal roknay ke be shumaar tarike hain taham ziyada tar log Doctoron aur Hakeemon ke paas janay ke bajaye Desi tareeqon par inhisaar karte hain. Is tehreer mein hum aap ko bitayen ge ke hamal rokne k desi totkay kon kon se hain aur un ko kaisay istemaal karna hai.

حمل روکنے کا پہلا دیسی طریقہ یہ ہے کہ 6 گرام تلسی کے تازہ پتے ایک کپ پانی میں جوش دے کر چھان لیں اور حیض سے فارغ ہونے کے بعد ایک ہفتہ تک روزانہ صبح پی لیں، اس نسخہ کو تین مہینے تک ہر حیض سے فارغ ہونے کے بعد استعمال کریں، حمل نہیں ٹھہرے گا۔

Hamal roknay ka pehla desi tarika yeh hai ke 6 gram Tulsi ke taaza pattay aik cup pani mein josh day kar chhaan len aur haiz se farigh honay ke baad aik hafta tak rozana subah pi len, is nuskha ko teen mahinay tak her haiz se farigh honay ke bad istimal karen, hamal nahi thehray ga.

حمل روکنے کے جہاں بے شمار دیسی طریقے ہیں وہیں ایک طریقہ یہ بھی ہے کہ حیض سے فارغ ہونے کے بعد تین دن تک ارند کے بیج کی گری پانی کے ساتھ کھائیں۔ اس طرح تین مہینے تک حیص سے فارغ ہونے کے بعد استعمال کریں تو حمل نہیں ٹھہرے گا۔

Hamal roknay ke jahan be shumaar desi tarike hain wahein aik tarika yeh bhi hai ke Haiz se farigh hone ke bad teen din tak Arand ke beej ki giri pani ke sath kha len is tarah teen mahinay tak his se farigh honay ke baad istemaal karen to hamal nahi thehray ga.

حمل روکنے کا سب سے بہترین اور آسان طریقہ یہ ہے کہ مباشرت کرتے وقت عضو خاص کی ٹوپی پر تل کا تیل لگایا جائے۔ عضو خاص پر تل کا تیل لگا کر مباشرت کرنے سے حمل نہیں ٹھہرتا۔

Hamal roknay ka sab se behtareen aur aasan tarika yeh hai ke mubashrat karte waqt uzoo khaas ki topi par til ka tail lagaya jaye. Uzoo khaas par til ka tail laga kar mubashrat karne se hamal nahi tharta.

یہ تحریر محض معلومات عامہ کے لئے شائع کی جا رہی ہے۔ یاد رکھیں ہر ٹوٹکہ ہر انسان کے لئے نہیں ہوتا۔ اس لئے اپنے تئین کوئی نسخہ مت آزمائیں بلکہ اپنے معالج سے مشورہ کر کے اس کی ہدایات کے مطابق عمل کریں۔

Ye tehreer mehez maloomat aama ke liye shaya ki ja rahi hai. yaad rakhen har totka har insan ke liye nahi hota. iss liye apne tain koi nuskha mat azmayen, balkay apne mualij (Doctor, Tabeeb) se mahswara kar ke is ki hadaayat ke mutabiq amal karen, shukriya.

شیئر کریں