حاملہ خواتین کی خوراک

صحت کی بہتری کے لئے ہر انسان کو ہر حالت میں صحت بخش غذا کی ضرورت ہوتی ہے لیکن حاملہ خواتین کےمعاملے میں اس کی اہمیت اور بڑھ جاتی ہے۔ ہمارے ہاں دوران حمل خواتین کو جو مسئلہ سب سے زیادہ درپیش ہوتا ہے وہ خون کی کمی کا ہے۔

Sehat ki behtari ke liye har insan ko har haalat mein sehat bakhash ghiza ki zaroorat hoti hai lekin Haamla Khawateen ke muamlay mein is ki ahmiyat aur barh jati hai. Hamaray haan Doran Hamal khawateen ko jo masla sab se ziyada darpaish hota hai wo Khoon ki kami ka hai.

یہی خون کی کمی آگے جاکر بچے کی نشونما کو بھی متاثر کرتی ہے۔خون کی کمی کی بنیادی وجہ خوراک میں آئرن کی کمی یا اچھی خوراک نہ لینا ہوتا ہے۔

Yahi khoon ki kami agay jaakar bachay ki Nash-o-Numa ko bhi mutasir karti hai. Khoon ki kami ki bunyadi wajah khoraak mein Iron ki kami ya achi khoraak na lena hota hai.

دوران حمل مختلف قسم کی خوراک سے خواتین نا صرف خود کو صحت مند رکھ سکتی ہیں بلکہ ان کے شکم میں پرورش پانے والے بچے کو بھی خاطر خواہ فائدہ پہنچ سکتا ہے اور اس کی صحیح نشوونما ہو سکتی ہے۔

Doran hamal (During Pregnancy) mukhtalif qisam ki ghzaon se khawateen na sirf khud ko sehat mand rakh sakti hain balkay un ke shikam mein parwarish panay walay bachay ko bhi khatir khuwa faida pahonch sakta hai aur is ki sahih nashonuma ho sakti hai.

حاملہ عورتوں کو صحت مند رہنے کےلئے اور زچگی کی طاقت پیداکرنے کےلئے اضافی خوراک کی ضرورت ہوتی ہے۔ ہر حاملہ عورت کو چاہیے کہ وہ عام دنوں سے زیادہ کھائے کیونکہ ماں کی صحت اور بچے کی نشو ونما کے لئے بھی ضروری ہے۔دن میں تین دفعہ کھانا کھائیے۔ ہر کھانے پر روٹی اور سالن کی دگنی مقدار استعمال کریں۔

Haamla aurton ko sehat mand rehne ke liye aur Zachgi ki taaqat paida karnay ke liye izafi khoraak ki zaroorat hoti hai. Har haamla aurat ko chahiye ke wo aam dinon se ziyada khaye kyun kay maa ki sehat aur bachay ki nasho numa ke liye bhi zaroori hai. Din mein 3 dafaa khana khayiyae. Har khanay par roti aur saalan ki dugni miqdaar istemaal karen.

حمل کے مثبت نتائج کیلئےنہ صرف دوران حمل بلکہ حاملہ ہونے سے کم از کم چار ماہ پہلے اچھی اور صحت مند غذا کا استعمال شروع کر دینا چاہیے۔ اور مضر صحت اشیاء سے پرہیز کرنا چاہیے۔

Hamal ke musbat nataij ke liye na sirf doran hamal balkay haamla honay se kam az kam 4 mah pehlay achi aur sehat mand ghiza ka istemaal shuru kar dena chahiye. Aur muzir sehat ashya se parhaiz karna chahiye.

حاملہ خواتین کی صحت بخش غذا کا مطلب یہ ہوتا کہ وہ درج ذیل اقسام کی غذاؤں میں سے روزانہ مختلف غذا کھائیں، اس طرح انہیں اپنے بچے کے لیے اور خود اپنے لیے ضرورت کے مطابق مقویات اور معدنیات حاصل ہو سکیں گے۔

Haamla khawateen ki sehat bakhash ghiza ka matlab ye hota ke wo darj zail aqsam ki ghzaon mein se rozana mukhtalif ghiza khayen, is terha inhen apne bachay ke liye aur khud apne liye zaroorat ke mutabiq maqwayat aur madniyaat haasil ho saken ge.

اس تحریر میں ہم آپ کو بتائیں گے کہ حاملہ عورت کی غذا کیا ہے؟ دوران حمل خواتین کو کون کون سی غذاؤں کا استعمال کرنا چاہیے۔ حاملہ عورتوں کے لئے بہترین خوراک کون سی ہے۔ حمل کے دوران کھانے میں کیا کیا احتیاطیں کرنی چاہیں، یہ سب اور بہت کچھ۔۔۔

Is tehreer main hum aap ko batain gay ke Hamla Khawateen Ki Khurak kya hai, Hamla Khawateen apni ghiza main kya kya istimal karen, pregnancy diet in Urdu, healthy foods for pregnant women in Urdu, Hamal ke dorain kya ahtiyat karen.

دوران حمل پھلوں اور سبزیوں کا استعمال

پھل اور سبزیاں وٹامین اور معدنیات کے اچھے ذرائع ہیں۔ پتے والی سبزیوں میں بھرپور مقدار میں فولک ایسڈ پائی جاتی ہے جس کی وجہ سے جنین عصبی نلی کی خرابی (دماغ اور ریڑھ کی ایک قسم کی پیدائشی خلاف معمول حالت) سے متاثر ہونے سے محفوظ رہتا ہے۔

حاملہ خواتین کے لئے ضروری ہے کہ وہ اپنی خوراک میں پھل اور سبزیوں کا استعمال سب سے زیادہ کریں۔ کیونکہ پھل اور سبزیوں میں بہت سے وٹامن ہوتے ہیں ۔ جو انسانی صحت کے لئے بہت ضروری ہیں۔ روزانہ تین طرح کے پھل ہر حال میں کھانا چاہیں۔اس سے نظام انہظام درست رہتا ہے اور قبض بھی نہیں ہوتی۔

Doran hamal Phalon aur Sabzion ka istemaal

Hamla khawateen ke liye zaroori hai ke wo apni khoraak mein Phal aur Sabzion ka istemaal sab se ziyada karen. Kyun kay Phal aur Sabzion mein bohat se vitamin hotay hain.

Jo insani sehat ke liye bohat zaroori hain. Rozana 2 se 3 terha ke phal har haal mein khana chahain. Is se nizaam inhizam durust rehta hai aur qabz bhi nahi hoti.

علاوہ ازیں حاملہ عورتوں کو چاہیے کہ وہ مناسب مقدار میں وٹامن سی کا استعمال بھی کریں۔ وٹامن سی اسٹرابیری، ٹماٹر اور سیاہ منقہ وغیرہ میں پایا جاتا ہے۔ یہ وٹامن سنگترے ، کینو، مالٹے ، چکوترے اور انناس کے رس میں بھی ہوتا ہے۔ یاد رکھیں پھل جو بھی کھائیں لیکن اچھی طرح دھو کر کھائیں۔

Ilawa azeen hamla aurton ko chahiye ke wo munasib miqdaar mein Vitamin C ka istemaal bhi karen. Vitamin C strawberry, timatar aur siyah manqa waghera mein paaya jata hai.

نارنجی اور کیوی جیسے پھلوں میں موجود وٹامین سی آئرن جذب کرنے میں آپ کے جسم کی مدد کرتی ہے۔ رنگین ترکاریوں اور پھلوں میں بھرپور کروٹین پائی جاتی ہے جو مناسب وٹامین اے حاصل کرنے میں آپ کی مدد کرتی ہے، جیسے کدو، ٹماٹر، اور تمام گہرے ہرے رنگ کی ترکاریاں وغیرہ۔

Ye vitamin sangtray, kinnu, maaltay, chakotary aur anannaas ke ras mein bhi hota hai. Yaad rakhen phal jo bhi khayen lekin achi terha dho kar khayen.

نشاستہ سے بنی غذاؤں کا استعمال

پھل اور سبزیوں کے بعد روٹی ، چاول، بریڈ، سویاں،نوڈلز ، اناج،آلو، اروی، رتالو،شکر قندی ا ورنشاستے دار اشیاء کا نمبر آتا ہے۔ان غذاؤں سے توانائی حاصل ہوتی ہے اور ان میں معدنیات اور وٹامنز ہوتے ہیں۔ جو انسانی صحت کے لئے ضروری ہوتے ہیں۔

Hamla khawateen ke liye Nashasta se bani Ghzaon ka istemaal

Phal aur sabzion ke baad Roti, Chawal, Bread, Sawaiyan, Noodles, Anaaj, Aalo, Arwi, Ratalo, Shukar Kandi aur Nashstay-daarashya ka number aata hai. Un ghzaon se tawanai haasil hoti hai aur in mein madniyaat aur vitamins hotay hain. Jo insani sehat ke liye zaroori hotay hain.

اور خاص کر حاملہ عورتوں کو ہر کھانے میں ان اشیاء میں سے کچھ نہ کچھ ضرور کھانا چاہیے۔ کھانے کے لئے زیادہ ریشے دار اشیاء کا انتخاب کیا جائے۔اور جب بھی جہاں تک ممکن ہوچکی کا آٹا استعمال کریں اور روٹی بغیر چھنے ہوئے آٹے کی بنائیں۔

اناج: چاول، پاستہ یا روٹی سے آپ کو توانائی نیز وٹامین بی گروپ ملتے ہیں۔ سالم اناج والی غذائیں وٹامین اور غذائی نشاستہ سے بھرپور ہوتی ہیں جو آپ کو قبض سے بچاتی ہیں۔ سالم اناج کی مصنوعات منتخب کریں، جیسے خالص چاول یا میدے والی روٹی کی جگہ بھورا چاول، سالم گیہوں کی روٹی یا جو وغیرہ

Aur khaas kar hamla aurton ko her khanay mein un ashya mein se kuch na kuch zaroor khana chahiye. Khanay ke liye ziyada raishay daar ashya ka intikhab kya jaye. Aur jab bhi jahan tak mumkin ho chakki ka aatta istemaal karen aur roti baghair chhanay hue aattay ki banayen.

پروٹین والی غذاؤں کا استعمال

اگلے زمرے میں گوشت، مرغی ، مچھلی، انڈا، مٹر، خشک پھلیاں، اخروٹ اور دالیں وغیرہ شامل ہیں۔ ان میں پروٹین ، فولاد اور وٹامنز ہوتے ہیں جو بچوں کی نشوونما میں مدد دینے کے ساتھ ساتھ حاملہ خواتین کے لئے بھی ضروری ہیں۔

Hamla khawateen ke liye Protein wali ghzaon ka istemaal

Aglay zamray mein gosht, murghi, machhli, anda, mutter, khushk Phalian aur Dalain waghera shaamil hain. in mein Protein, Folaad aur Vitamins hotay hain jo bachon ki nashonuma mein madad dainay ke sath sath hamla khawateen ke liye bhi zaroori hain.

اس کے علاوہ ایسی غذاؤں کا استعمال کیا جائے ، جن سے فولاد جذب کرنے میں مدد ملے ۔گوشت پکاتے ہوئے کم سے کم تیل یا چکنائی کا استعمال کریں۔ اور کوشش کریں کہ گوشت اچھی طرح پکا ہوا ہو۔

پروٹین، آئرن اور وٹامین بی 12 حاصل کرنے کے لیے اپنی غذا میں بغیر چربی کے گوشت اور مرغی نیز متعدد گوشت کا انتخاب کریں۔

Is ke ilawa aisi ghzaon ka istemaal kya jaye, jin se folaad jazb karne mein madad miley. Gosht pakatay hue kam se kam tail ya chiknai ka istemaal karen. Aur koshish karen ke gosht achi terha pakka hawa ho.

ڈیری سے متعلقہ اشیاء کا استعمال

حاملہ خواتین کو اپنی خوارک میں دودھ، پنیر اور دہی کا استعمال بھی کرنا چاہیے۔ کیونکہ ان میں کیلیشم اور وٹامن ڈی ہوتا ہے جو ہڈی اور دانتوں کے لیے ضروری ہے۔ کوشش کریں کہ روزانہ ایک بڑا گلاس دودھ پئیں۔

Doran hamal Dairy se mutaliqa ashya ka istemaal

Haamla khawateen ko apni khwark mein Doodh, Paneer aur Dahi ka istemaal bhi karna chahiye. Kyun kay in mein Calciumaur Vitamin D hota hai jo Haddi aur Danoton ke liye zaroori hai. Koshish karen ke rozana aik bara glass doodh piyen.

دیگر اشیاء جن میں کیلشیم زیادہ ہوتا ہے ان میں سویابین کا دودھ، سویابین کی پنیر اور تل وغیرہ شامل ہیں۔یہ بھی خوارک کا لازمی جزو ہونا چاہیے۔ بس کوشش کرنی چاہیے کہ یہ اشیاء کم چکنائی والی ہوں۔

Deegar ashya jin mein calcium ziyada hota hai in mein soybean ka doodh, soybean ki paneer aur tall waghera shaamil hain. Ye bhi khwark ka laazmi jazo hona chahiye. Bas koshish karni chahiye ke ye ashya kam chiknai wali hon.

دیگر ضروری غذائیں

جو خواتین گوشت نہیں کھانا چاہتیں، انہیں چاہیے کہ وہ گولیوں کی شکل میں وٹامن بی 12 ضرور لیں۔ کیونکہ یہ وٹامن سبزیوں ، دلیے، اور دالوں میں نہیں ہوتا ہے۔

Deegar Ghazain jo hamla khawateen ke liye zaroori hain

Jo khawateen gosht nahi khana chahtain, inhen chahiye ke wo golion ki shakal mein Vitamin B 12 zaroor len. Kyun kay ye vitamin sabzion, dlie, aur daalon mein nahi hota hai.

اگر خون کی کمی ہو تو ڈاکٹر کے مشورے سے فولاد کی گولیاں استعمال کریں۔ فولک ایسڈ حمل کے دوران بہت اہم ہوتا ہے۔ یہ مختلف غذائی اشیاء میں پایا جاتا ہے

Agar khoon ki kami ho to Doctor ke mashwaray se folaad ki golian istemaal karen. Folic acid hamal ke doran bohat ahem hota hai. Ye mukhtalif ghizai ashya mein paaya jata hai khawateen ko chaiye ke hamal ke pehlay baara hafton mein folic acid ki golian khayen aur baqi muddat mein ghiza se ye vitamin haasil karen.

خواتین کو چائیے کہ حمل کے پہلے بارہ ہفتوں میں فولک ایسڈ کی گولیاں کھائیں اور باقی مدت میں غذا سے یہ وٹامن حاصل کریں۔ مثال کے طور پر ناشتے میں کھائے جانے والے دلیے، گوشت اور سبزیوں کا رس، پالک ، نارنجی، لوبیہ ، آلو، بند گوبھی اور پھول گوبھی وغیرہ میں فولک ایسڈ موجود ہوتا ہے۔

Misaal ke tor par nashtay mein khaye jane walay daliye, gosht aur sabzion ka ras, palaak, naranji, lobiya, aalo, band gobhi aur phool gobhi waghera mein folic acid mojood hota hai.

حاملہ خواتین کو بہت زیادہ چکنائی اور شکر آمیز اشیاء سے پرہیز کرنا چاہیے۔ اگر یہ اشیاء کھائیں بھی تو کم مقدار میں کھائیں ۔ یہ بات بھی یاد رکھیں کہ سورج کی کرنیں جسم پر پڑتی رہیں تو ہمارے جسم کو اپنی ضرورت کے مطابق کافی مقدار میں وٹامن ڈی حاصل ہو جاتا ہے۔

Haamla khawateen ko bohat ziyada chiknai aur shukar amaiz ashya se parhaiz karna chahiye. Agar ye ashya khayen bhi to kam miqdaar mein khayen. Ye baat bhi yaad rakhen ke sooraj ki kiranen jism par padtee rahen to hamaray jism ko apni zaroorat ke mutabiq kaafi miqdaar mein vitamin d haasil ho jata hai.

دوران حمل کھانے میں احتیاطیں

حاملہ خواتین کو بعض غذائی اشیاء سے اجتناب کرنا چاہیے کیونکہ ان سے ان کو خطرات لاحق ہو سکتے ہیں۔ وہ غذائی اشیاء درج ذیل ہیں۔

  • وہ نرم آئسکریم جو مشینوں سے نکلتی ہے اور کون کی شکل میں بکتی ہے۔ نہ کھائیں۔
  • کچا دودھ استعمال نہ کریں۔ البتہ جراثیم سے پاک کیا ہوا دودھ صحیح ہے۔
  • نرم پنیر یا بھیڑ ،بکری کے غیر پاسچر شدہ دودھ سے بنی ہوئی پنیر نہ کھائیں۔
  • گوشت ، مرغی اور مچھلی کو اچھی طرح پکا کر کھائیں۔ اور اطمینان کر لیں کہ ان کے پکنے میں کوئی کثر رہ تو نہیں گئی۔
  • ایسی غذانہ کھائیں جس میں کچے انڈے ڈالے گئے ہوں، انڈا ایسا کھائیں جس کی زردی سخت ہو چکی ہو۔
  • کھانے کی تیاری یا کھاتے وقت اچھی طرح ہاتھ دھو لیں۔ خاص کر کچا گوشت چھونے کے بعد ہاتھ اچھی طرح سے دھو لیں۔
  • حاملہ خواتین کو خالی پیٹ نہیں رہنا چاہیے اور تھوڑا تھوڑا کر کے دن میں کئی مرتبہ کھانا چاہیے۔
  • مرغن اور مسالے دار غذا سے پرہیز کریں اگر دودھ سے رغبت نہ ہو تو دہی، پنیر اور ایسی غذا کھائیں جن میں دودھ شامل ہو۔
  • چائے ، کوفی یا سافٹ ڈرنکس کے بجائے پانی، دودھ، پھلوں کے رس اور ایسے مشروبات پر زور دیں جن میں شکر شامل نہ کی گئی ہو۔
  • چہل قدمی کریں اور رات کا کھانا جلدی کھائیں۔ دن میں ایک یا دو گھنٹے آرام ضرور کریں۔
  • چکنے، مسالے دار اور بہت زیادہ میٹھے کھانوں سے پرہیز کریں، اس طرح سینے کی جلن سے بھی بچا جا سکتا ہے اور وزن کو قابو میں رکھنے میں بھی مدد ملے گی۔
  • چینی ملی ہوئی غذا اور ٹھوس چربی، جیسے تلی ہوئی غذا، پانی ملا کر تیار کردہ نوڈلز، آئس کریم، کینڈی، بسکٹ، فواکہ، سافٹ ڈرنک یا سوڈا کا استعمال کم سے کم کریں کیونکہ ان غذاؤں میں کیلوری زیادہ اور مغذیات کم پائی جاتی ہیں
  • بچے کی پیدائش کے بعد بھی صحت بخش غذا کا استعمال جاری رکھیں۔
  • نمک کم استعمال کریں۔ اور وافر مقدار میں پانی پیئیں۔
  • زیادہ دیر تک کھڑے ہوکر کام نہ کریں۔نیز بھاری بوجھ اٹھانے سے پرہیز کریں۔
  • اگر آپ نے ان ہدایات پر عمل کیا اور انہیں اپنی زندگی کا معمول بنا لیا۔تو یقین کریں آپ کے آنگن میں کھلنے والا پھول نہ صرف صحت مند ہو گا بلکہ آپ کی صحت بھی پہلے سے کئی گنا اچھی ہو جائے گی۔

Doran hamal khanay mein ahtiyatain

Hamla khawateen ko baaz ghizai ashya se ijtinab karna chahiye kyun kay un se un ko khatraat la-haq ho satke hain. wo ghizai ashya darj zail hain.

  1. Wo naram icecream jo machinon se nikalti hai aur kon ki shakal mein bikti hai. Na khayen.
  2. Kacha doodh istemaal na karen. Albata jaraseem se pak kya hawa doodh sahih hai.
  3. Naram paneer ya bheer, bakri ke ghair pachar shuda doodh se bani hui paneer na khayen.
  4. Gosht, murghi aur machhli ko achi terha pakka kar khayen. Aur itminan kar len ke un ke paknay mein koi ksr reh to nahi gayi.
  5. Aisi ghaza na khayen jis mein kachay anday daaley gaye hon, anda aisa khayen jis ki zardi sakht ho chuki ho.
  6. Khanay ki tayari ya khatay waqt achi terha haath dho len. Khaas kar kacha gosht chone ke baad haath achi terha se dho len.
  7. Haamla khawateen ko khaali pait nahi rehna chahiye aur thora thora kar ke din mein kayi martaba khana chahiye.
  8. Murghan aur masalay daar ghiza se parhaiz karen agar doodh se raghbat na ho to dahi, paneer aur aisi ghiza khayen jin mein doodh shaamil ho.
  9. Chaye, kofi ya soft drinks ke bajaye pani, doodh, phalon ke ras aur aisay mashrobat par zor den jin mein shukar shaamil na ki gayi ho. Ye mashrobat din mein aath se das glass piyen.
  10. Chehal qadmi karen aur raat ka khana jaldi khayen.
    Chikane, masalay daar aur bohat ziyada meethay khaano se parhaiz karen, is terha seenay ki jalan se bhi bacha ja sakta hai aur wazan ko qaboo mein rakhnay mein bhi madad miley gi.
  11. Bachay ki paidaiesh ke baad bhi sehat bakhash ghiza ka istemaal jari rakhen.
  12. Din mein aik ya do ghantay aaraam zaroor karen.
  13. Ziyada der tak kharray hokar kaam na karen. Neez bhaari boojh uthany se parhaiz karen.
    Agar aap ne in hadayat par amal kya aur inhen apni zindagi ka mamool bana liya. To yaqeen karen aap ke aangan mein khilnay wala phool na sirf sehat mand ho ga balkay aap ki sehat bhi pehlay se kayi gina achi ho jaye gi.

مغذیات کا استعمال

مختلف انواع و اقسام کی غذائیں کھا کر، آپ کو ایسی مغذیات ملتی ہیں جن سے آپ کے بچے کی نشوونما کو تقویت ملتی ہے اور آپ زندگی سے بھرپور رہتی ہیں۔ یہاں پر ہم آپ کو بتائیں گے کہ وہ اہم مغذیات کیا ہیں جن پر خاص توجہ دینے کی ضرورت ہے؟

1 فولک ایسڈ:

فولک ایسڈ خون بننے اور خلیہ کی افزائش کے لیے اہم ہے۔ یہ بچے کی معیاری نشوونما کے لیے ضروری ہے اور حمل کے پہلے ہفتے کے دوران کچھ پیدائشی نقائص کو روکنے کے لیے اس کی ضرورت پڑتی ہے،

عصبی نلی کی خرابی میں خواتین کو یہ صلاح دی جاتی ہے کہ وہ حمل کے پہلے مہینے کے دوران حمل کے لیے فولک ایسڈ کے تکملات استعمال کریں۔ ان خواتین کے لیے بھی اس کی سفارش کی جاتی ہے جو حاملہ ہونے کی کوشش کررہی ہیں۔

2 آیوڈین

حاملہ خواتین کے لئے مناسب آیوڈین کا استعمال جنین کے دماغ کی افزائش اور نشوونما کے لیے ضروری ہے۔ اگرچہ مچھلی، سمندری غذا اور دودھ آپ کو آیوڈین فراہم کرتے ہیں، لیکن ان سے حمل کے دوران کی اعلی ضرورت پوری نہیں ہوسکتی ہے۔ آپ کو پیدائش سے قبل کی وٹامین اور معدنی تکملہ لینے پر غور کرنا چاہیے۔

3 وٹامن ڈی

کیلشیم جذب کرنے یا ہڈیوں کو مضبوط کرنے کے لیے حاملہ خواتین کے جسم کو وٹامین ڈی کی ضرورت پڑتی ہے۔ مرغن مچھلی، انڈے اور مضبوط کردہ دودھ جیسی غذائیں صرف محدود مقدار میں وٹامین ڈی فراہم کرتی ہیں۔
وٹامین ڈی دھوپ میں جلد کے نیچے تیار ہوتی ہے۔ جن خواتین کی جلد زیادہ گہری ہے، جو اپنے جسم کے اکثر حصے کو کپڑوں سے ڈھکی رہتی ہیں یا اکثر اوقات گھر کے اندر رہتی ہیں، ان میں وٹامین ڈی کی کمی کا خطرہ ہوتا ہے جس سے ان کے بچے کی ہڈیوں پر اثر پڑ سکتا ہے۔

4 آئرن

حاملہ ہونے پر آپ کو اضافی آئرن کی ضرورت پڑتی ہے۔ بہترین ذرائع بغیر چربی والے گوشت، مچھلی، گہرے ہرے رنگ کی پتے دار ترکاریاں، خشک پھلی، اور آئرن ملے ہوئے ناشتے کے اناج ہیں۔
وٹامین سے بھرپور پھل اور ترکاریوں والا کھانا یا ہری پتے دار ترکاریوں کے ساتھ گوشت یا مچھلی کھانے سے آئرن کی مقدار کو بڑھانے میں مدد ملتی ہے۔ اپنے کھانے کے ساتھ چائے اور کافی پینے سے بچیں کیوں کہ ان سے آئرن کو جذب کرنے میں کمی آتی ہے۔

5 اومیگا تھری – چربیلا تیزاب

اومیگا تھری – چربیلا تیزاب میں ڈی ایچ اے (DHA) اور ای پی اے (EPA) ہوتی ہیں۔ ڈی ایچ اے آپ کے جسم کے دماغ اور آنکھوں کی نشوونما کے لیے اہم ہے۔ سن بیج، اخروٹ اور کینولا تیل اومیگا – 3 – چربیلا تیزاب کے اچھے ذرائع ہیں۔ آپ لگاتار مرغن مچھلی کھانے سے ڈی ایچ اے حاصل کرسکتی ہیں۔ اگر آپ مچھلی نہیں کھاتی ہیں، تو آپ ڈی ایچ اے پر مشتمل تکملہ لینے پر غور کرسکتی ہیں۔

حمل کے دوران خوراک کے ساتھ ساتھ سرگرم رہنے کے بہت سارے فائدے ہیں۔ اس سے حمل کی تکالیف کو کم کرنے، مزاج کو بہتر رکھنے، نیند، اور وزن میں مناسب اضافے کو بڑھاوا دینے میں مدد ملتی ہے۔ روزانہ کم سے کم 30 منٹ جسمانی سرگرمی انجام دیں۔

نوٹ: حاملہ عورت کی غذا متعلقہ یہ تحریر محض معلومات عامہ کے لئے شائع کی جا رہی ہے۔ یاد رکھیں ہر ٹوٹکہ ہر انسان کےلئے نہیں ہوتا۔ اِس لئے اپنے تئیں کوئی نسخہ مت آزمائیں، بلکہ اپنے معالج (ڈاکٹر، طبیب) سے مشورہ کر کے اس کی ہدایت کے مطابق عمل کریں، شکریہ۔

اگر آپ کو یہ تحریر اچھی لگی ہے تو آپ کا حق بنتا ہے کہ اسے فیس بک پر زیادہ سے زیادہ شیئر کریں۔ تاکہ آپ کے دوست احباب کی بھی بہتر طور پر راہنمائی ہو سکے۔

Hamla Khawateen se mutaliqa ye tehreer mehez maloomat aama ke liye shaya ki ja rahi hai. yaad rakhen har totka har insan ke liye nahi hota. iss liye apne tain koi nuskha mat azmayen, balkay apne mualij (Doctor, Tabeeb) se mahswara kar ke is ki hadaayat ke mutabiq amal karen, shukriya.

 

شیئر کریں