حرکت میں برکت ہے

حرکت میں برکت ہے۔ حرکت ہی سے نہ صرف انسان کو پیٹ بھر روٹی ملتی ہے بلکہ وہ صحت وتندرستی بھی پاتا ہے۔ دوسری طرف سست و کاہل انسان زندگی میں کچھ نہیں کر پاتا اور بے حرکتی کے باعث بیماریوں میں مبتلا رہتا ہے۔

Harkat mein barket hai. Harkat hi se na sirf insan ko pait bhar rootti millti hai balkay wo sahet o tandursti bhi paata hai. Doosri taraf sust o kaahil insan zindagi mein kuch nahi kar paata aur be harkati ke baais bimarion mein mubtala rehta hai.

ماہرین طب کا کہنا ہے کہ تندرست اور امراض سے دور رہنے کے لیے ضروری ہے کہ ہر انسان باقاعدگی سے ورزش کرے۔ حرکت میں برکت مضمون اردو میں۔

Mahireen tib ka kehna hai ke tandrost aur amraaz se daur rehne ke liye zurori hai ke har insan baqaidagi se werzish kere. Harkat mein barkat essay in Urdu

اس سلسلے میں وہ تجویز دیتے ہیں کہ ہفتے میں کم ازکم 150 منٹ کی مناسب یا 75 منٹ کی سخت ورزش کیجیے۔ تبھی انسان دور جدید کی بیماریوں مثلاً ذیابیطس، بلڈ پریشر، موٹاپے، کینسر وغیرہ سے بچ پاتا ہے۔

Is silsilay mein wo tajweez dete hain ke haftay mein kam azkam 150 minute ki munasib ya 75 minute ki sakht werzish kiijiye. Tabi insan daur jadeed ki bimarion maslan diabetes, blood pressure, motapay, cancer waghera se bach paata hai.

شہروں میں زندگی بہت مصروف ہو چکی۔ اسی لیے بیشتر شہری مرد و زن ورزش کے لئے وقت نہیں نکال پاتے۔ جو لوگ جسمانی سرگرمی والے پیشوں سے منسلک ہیں مثلاً کھیتی باڑی، راج گیری، معماری وغیرہ ان کی تو دوران کام کاج خوب ورزش ہو جاتی ہے۔لیکن جو افراد گھر اور دفتر میں رہتے ہیں ان کی ورزش نہیں ہو پاتی۔

Shehron mein zindagi bohat masroof ho chuki. Isi liye beshtar shehri mard o zan werzish ke liye waqt nahi nikaal paate. Jo log jismani sargarmi walay pishon se munsalik hain maslan khaiti baari, raaj gary , mamari waghera un ki to douran kaam kaaj khoob werzish ho jati hai. Lekin jo afraad ghar aur daftar mein rehtay hain un ki werzish nahi ho paati.

نت نئی ایجادات نے جہاں انسان کی زندگی آسان بنا دی ہے ۔وہیں ایجادوں کا منفی پہلو یہ ہے کہ بیشتر انسان ان کے عادی ہو چکے۔ اب کسی شخص کو قریبی دکان بھی جانا ہو تو وہ کار،موٹرسائیکل یا سائیکل پر جاتا ہے اور پیدل چلنا گوارا نہیں کرتا۔حتی کہ اب اگر کسی دوست سے ملنا ہو یا کوئی کام ہو تو وہ بھی بذریعہ فون ہو جاتا ہے۔ غرض ایجادات کی بدولت ہماری روزمرہ جسمانی سرگرمی خاصی گھٹ چکی ہیں۔

Nat nayi ayjadat ne jahan insan ki zindagi asaan bana di hai. Wahein ejadon ka manfi pehlu yeh hai ke beshtar insan un ke aadi ho chuke. Ab kisi shakhs ko qareebi dukaan bhi jana ho to wo car, motorcycle ya cycle par jata hai aur paidal chalna gawara nahi karta. Hatta ke ab agar kisi dost se milna ho ya koi kaam ho to wo bhi ba zarea phone ho jata hai. Gharz ayjadat ki badolat hamari roz marrah jismani sargarmi khasi ghatt chuki hain.

ایک عام پاکستانی عورت کھانا پکاتے‘ بچوں کو سنبھالتے‘ جھاڑو پونچھ کرتے روزانہ تقریباً ایک ڈیڑھ گھنٹے مصروف رہتی ہے۔ گویا وہ ہفتے میں ورزش کا مطلوبہ وقت… 150 منٹ عموماً پا لیتی ہے۔ اسی لیے متوسط طبقے و نچلے طبقے کی خواتین عموماً سمارٹ و چست ہوتی ہیں۔ تاہم جن گھرانوں میں ملازمین کی کثرت ہو، وہاں عموماً خواتین موٹاپے کا شکار رہتی ہیں۔

Aik aam pakistani aurat khana pakatay’ bachon ko sambhaalte’ jharoo ponch karte rozana taqreeban aik daidh ghantay masroof rehti hai. Goya wo haftay mein werzish ka matlooba waqt … 150 minute umooman pa layte hai. Isi liye mutwast tabqay o nichale tabqay ki khawateen umooman smart o chust hoti hain. Taham jin ghranon mein mulazmeen ki kasrat ho, wahan umooman khawateen motapay ka shikaar rehti hain.

یہی کُلیہ مردوں پر بھی صادق آتا ہے۔ جو مرد چلتے پھرتے کام کاج کریں ،وہ سمارٹ و چاق وچوبند رہتے ہیں۔ ان کا پیٹ پھول کر انہیں بھدا نہیں بناتا۔ حتیٰ کہ میز پر بیٹھ کر کام کرنے والے مرد بھی فارغ وقت میں کوئی چلت پھرت والا مشغلہ اپنائیں مثلاً باغبانی یا کوئی کھیل کھیلنا تو انہیں تندرستی کی نعمت نصیب ہوجاتی ہے۔

Yahi kُlih mardon par bhi sadiq aata hai. Jo mard chaltay phirtay kaam kaaj karen, wo smart o chaaq vchobnd rehtay hain. Un ka pait phool kar inhen bhadda nahi banata. Hatta ke maiz par baith kar kaam karne walay mard bhi farigh waqt mein koi chalet phirat wala mashgala apnayen maslan baghbani ya koi khail khelna to inhen tandrusti ki nemat naseeb ho jati hai.

ورزش کے متعلق ایک اور بات ذہن میں رکھیے۔ کئی لوگ یہ سوچ کر ہفتے میں ایک دو دن ایک ایک گھنٹے کی سخت ورزش کرتے ہیں کہ انہوں نے مطلوبہ وقت حاصل کر لیا۔ جدید تحقیق کی رو سے ہفتے میں ایک دو بار شدید ورزش کرنے سے کم فائدہ ہوتا ہے۔ وجہ یہ کہ روزانہ جتنی بھی ورزش کی جائے: ہلکی‘ معتدل یا سخت… اس کا اثر 12 تا 24 گھنٹے ہی رہتا ہے۔ لہٰذا ڈاکٹروں کا کہنا ہے کہ روزانہ بیس پچیس منٹ ورزش کیجیے تاکہ آپ پورے ہفتے اس کے فوائد سے مستفید ہوسکیں۔

Werzish ke mutaliq aik aur baat zehan mein rakhiye. Kayi log yeh soch kar haftay mein aik do din aik aik ghantay ki sakht werzish karte hain ke unhon ne matlooba waqt haasil kar liya. Jadeed tahaqeeq ki ro se haftay mein aik do baar shadeed werzish karne se kam faida hota hai. Wajah yeh ke rozana jitni bhi werzish ki jaye : halki’ motadil ya sakht … is ka asar 12 taa 24 ghantay hi rehta hai. Lehaza doctoron ka kehna hai ke rozana bees pachees minute werzish kiijiye taakay aap poooray haftay is ke fawaid se mustafeed hosakin.

جسم کی خرچ شدہ توانائی کا ایک پیمانہ یہ بھی ہے کہ کس سرگرمی میں فی گھنٹہ کتنے حرارے یا کیلوریز جلتی ہیں۔ اس پیمانے میں بھی گھریلو کام کاج بخوبی پورے اترتے ہیں۔ ماہرین کے مطابق خاتون خانہ صفائی کرتے اور چلتے پھرتے فی گھنٹہ 315 حرارے جلاتی ہیں۔ حرارے جلنے کی یہ مقدار بیٹھے رہنے سے تین گنا زیادہ ہے۔ چنانچہ اگر گھر کے کام کرنے والی خاتون ورزش نہیں کرتی یا جم نہیں جاتی تو وہ فکرمند نہ ہو، گھر کے کام کاج ہی اسے تندرست و سمارٹ رکھیں گے۔

Jism ki kharch shuda tawanai ka aik pemana yeh bhi hai ke kis sargarmi mein fi ghanta kitney hararay ya calories jalti hain. Is pemanay mein bhi gharelo kaam kaaj bakhoobi poooray utartay hain. Mahireen ke mutabiq khatoon khanah safai karte aur chaltay phirtay fi ghanta 315 hararay jalatii hain. Hararay julne ki yeh miqdaar baithy rehne se teen gina ziyada hai. Chunancha agar ghar ke kaam karne wali khatoon werzish nahi karti ya jim nahi jati to wo fikarmand na ho, ghar ke kaam kaaj hi usay tandrost o smart rakhen ge.

اسی طرح آپ کے دفتر یا گھر میں سیڑھیاں ہیں تو ان پر چڑھنا اور اترنا بھی ایک قسم کی سخت ورزش ہے۔ ماہرین کی رو سے روزانہ صرف 30 منٹ سیڑھیاں استعمال کرنے سے 285 حرارے جل جاتے ہیں۔ اسی لیے یہ بہترین ورزش تسلیم کی جاتی ہے۔

Isi tarah aap ke daftar ya ghar mein seedhiyan hain to un par charhna aur utarna bhi aik qisam ki sakht werzish hai. Mahireen ki ro se rozana sirf 30 minute seedhiyan istemaal karne se 285 hararay jal jatay hain. Isi liye yeh behtareen werzish tasleem ki jati hai.

کھانا پکاتے ہوئے 39 میں 80 حرارے جلتے ہیں۔ یہ سرگرمی 9 منٹ تک ٹینس کھیلنے کے برابر ہے۔ اسی طرح درج بالا مدت ہی میں استری کرتے ہوئے 71 حرارے جلتے ہیں۔ جبکہ جھاڑ پونچھ 50 حرارے خرچ کرتی ہے۔

Khana pakatay hue 39 mein 80 hararay jaltay hain. Yeh sargarmi 9 minute tak tennis khailnay ke barabar hai. Isi tarah darj baala muddat hi mein istri karte hue 71 hararay jaltay hain. Jabkay jhaad ponch 50 hararay kharch karti hai.

سو قارئین! حرکت میں برکت ہے۔ آپ گھر میں ہوں یا دفتر میں‘ زیادہ عرصہ بیٹھ کر نہ گزاریئے۔ اور کچھ نہیں تو تازہ ہوا لینے ہی باہر چلے جایئے۔ معمولی سی جسمانی سرگرمی بھی ہمارے بدن کو تقویت پہنچاتی ہے۔

So qaryin! Harkat mein barket hai. Aap ghar mein hon ya daftar mein’ ziyada arsa baith kar na guzariye. Aur kuch nahi to taaza huwa lainay hi bahar chalay jayye. Mamooli si jismani sargarmi bhi hamaray badan ko taqwiyat pohanchati hai.

حرکت میں برکت ہے۔ یہ صرف ایک ضرب المثل ہی نہیں بلکہ ایک حقیقت بھی ہے۔ جدید سائنسی تحقیق نےاردو کی اس ضرب المثل کو ایک سائنسی حقیقت میں تبدیل کرکے رکھ دیاہے۔ یہ با برکت حرکت ہماری جسمانی ٹھنڈک کو حرارت میں تبدیل کرتی ہے، اور ہمیں چست و توانا بناتی ہے۔ ایک صحت مند اور چُست وتوانا انسان ہی کاروبار حیات میں فعال کر دار ادا کر سکتا ہے ۔اس کے بر عکس سستی اور کاہلی انسان کو بیمار کرنے کے ساتھ ساتھ زندگی میں بڑےکام کرنے سے بھی روکتی ہے۔

Harkat mein barket hai. Yeh sirf aik zarb almisal hi nahi balkay aik haqeeqat bhi hai. Jadeed scienci tahaqeeq ne Urdu ki is zarb almisal ko aik scienci haqeeqat mein tabdeel kar kay rakh dyahe. Yeh ba barket harkat hamari jismani thandak ko hararat mein tabdeel karti hai, aur hamein chust o tawana banati hai. Aik sahet mand aur chust o tawana insan hi kaarobar hayaat mein fa-aal kar daar ada kar sakta hai. Is ke bar aks susti aur kahili insan ko bemaar karne ke sath sath zindagi mein barray kaam karne se bhi rokti hai.

آج کے اس سہل پسند اور پُر آسائش دور میں مختلف آلات اور سہولیات کی فراہمی نے انسان کو ایسی طرز زندگی کا عادی بنا دیا ہے کہ جس کے باعث ہمارے جسم میں حرارت کی مطلوبہ مقدار کو برقرار رکھنے والا فطری نظام بگڑ کر رہ گیا ہے۔

Aaj ke is sahal pasand aur pur asayish daur mein mukhtalif alaat aur sahuliyaat ki farahmi ne insan ko aisi tarz zindagi ka aadi bana diya hai ke jis ke baais hamaray jism mein hararat ki matlooba miqdaar ko barqarar rakhnay wala fitri nizaam baggar kar reh gaya hai.

ہمارے جسم میں حرارت کی مستقل کمی واقع ہو رہی ہے اورلوگ نت نئی بیماریوں اور پیچیدگیوں کا شکار ہو رہے ہیں۔ ہمارے آباؤ اجداد تو شایدکبھی کبھار ہی بیمارہوتے تھے اور کچھ تو سوائے مرض الموت کے کبھی کسی بیماری کا شکار ہی نہ ہوئے۔ کبھی کسی کے سر میں درد ہو جاتا تو لوگ عیادت کر نے آتے ، کہ خیریت تو ہے پہلے تو آپ کبھی اتنے بیمار نہیں ہوئے۔

Hamaray jism mein hararat ki mustaqil kami waqay ho rahi hai aur log nnat nai bimarion aur pechidgion ka shikaar ho rahay hain. Hamaray abo ajdaad to shayed kabi kabhar hi bemar hote they aur kuch to siwaye marz ulmaut ke kabhi kisi bemari ka shikaar hi na hue. Kabhi kisi ke sir mein dard ho jata to log ayadat kar ne atay, ke kheriyat to hai pehlay to aap kabhi itnay bemaar nahi hue.

جب کہ آج کل سر درد، بڑو ں میں تو کیا بچوں میں بھی عام ہوتا جارہا ہے۔ اس لیے آج کے دور میں بجا طور پر یہ تجویز دی جاتی ہے کہ ورزش کو باقاعدگی سے اپنے معمول کا حصّہ بنایا جائے۔ باقاعدہ ورزش انسانی جسم میں حرارت کی درکار مقدار کو برقرار رکھتی ہے۔

Jab ke aaj kal sir dard, bro n mein to kya bachon mein bhi aam hota ja raha hai. Is liye aaj ke daur mein baja tor par yeh tajweez di jati hai ke werzish ko baqaidagi se apne mamool ka hissa banaya jaye. Baqaida werzish insani jism mein hararat ki darkaar miqdaar ko barqarar rakhti hai.

ایک انسان جو اپنے مقصد پیدائش کو پورا کرنے کا عزم رکھتا ہو ‘دنیا میں ایک کارآمدشخصیت بننا چاہتا ہو اور صحت مند اور کارآمد زندگی گزارنے کا ارادہ رکھتا ہو اسے یاد رکھنا چاہئے کہ حرکت میں برکت ہے۔ انتہائی سکون و تسلی کے ساتھ غور کیجئے کہ کیا حرکت کے بغیر آپ کوئی بھی کام کر سکتے ہیں؟

Aik insan jo apne maqsad paidaiesh ko poora karne ka azm rakhta ho’ duniya mein aik karamad shakhseeyat ban-na chahta ho aur sahet mand aur kaar amad zindagi guzaarne ka iradah rakhta ho usay yaad rakhna chahiye ke harkat mein barket hai. Intahi sukoon o tasalii ke sath ghour kijiyej ke kya harkat ke baghair aap koi bhi kaam kar satke hain ?

جسم انسانی ایک ایسی حیاتیاتی مشین ہے کہ جس میں تبدل و تعمیر کا سلسلہ ابتدائے حیات سے انتہائے حیات تک جاری رہتا ہے ‘ مختصراً یہ جسم خلیات جسے انگریزی میں سیلزCellsبھی کہتے ہیں‘ کا مرکب ہے ۔یہ خلیات نہ صرف مرتے رہتے ہیں اور ان کی جگہ نئے خلیات لیتے رہتے ہیں بلکہ حیات و صحت کا سلسلہ اسی طرح باقی و جاری رہتا ہے۔

Jism insani aik aisi hayatiati machine hai ke jis mein tabdal o taamer ka silsila ibtidaye hayaat se ant_haye hayaat tak jari rehta hai’ mukhtsiran yeh jism khaliyaat jisay angrezi mein cells kehte hain’ ka murakkab hai. Yeh khaliyaat na sirf martay rehtay hain aur un ki jagah naye khaliyaat letay rehtay hain balkay hayaat o sahet ka silsila isi tar h baqi o jari rehta hai.

یہ ایک فطری عمل یاپروسس ہے جسے جاری رہنا چاہئے اور خوبی کے ساتھ یہ عمل فطری اسی صورت میں جاری رہ سکتا ہے کہ جسم میں حرکت ہو۔ کیونکہ حرکت ہی وہ شے ہے جو پرانے خلیوں کو ختم کرتی ہے اور نئے خلئے ان کی جگہ لیتے ہیں اور جسم پھر تازہ ہو جاتا ہے۔ اگر حرکت نہ ہو اور انسان سستی کاپلندہ ہو کر پڑا رہے تو فطری عمل سست ہو جائےگا اور صحت و تازگی نہیں ‘بڑھاپا آ جائےگا۔

Yeh aik fitri amal ya process hai jisay jari rehna chahiye aur khoobi ke sath yeh amal fitri isi soorat mein jari reh sakta hai ke jism mein harkat ho. Kyunkay harkat hi wo shai hai jo puranay khalion ko khatam karti hai aur naye khuliye un ki jagah letay hain aur jism phir taaza ho jata hai. Agar harkat na ho aur insan susti ka palanda ho kar para rahay to fitri amal sust ho jaye ga aur sahet o taazgi nahi’ burhapa aa jaye ga.

ایک موٹر کار کو مثال بنانا چاہئے۔ اس میں انسان جیسے سارے ہی پرزے موجود ہیں۔ اس موٹر کی غذا پٹرول ہے یا ڈیزل ہے‘ موٹر کو یہ غذا ملتی ہے تو وہ چلتی ہے۔ یہ غذا نہ دیجئے موٹر چلنی بند ہو جائے گی‘ موٹر کو کھڑا رکھئے‘ حرکت نہ دیجئے اس کے کل پرزوں کو زنگ لگ جائے گا۔

Aik motor car ko misaal banana chahiye. Is mein insan jaise saaray hi purzey mojood hain. Is motor ki ghiza petrol hai ya diesel hai’ motor ko yeh ghiza millti hai to wo chalti hai. Yeh ghiza na dijiye motor chalni band ho jaye gi’ motor ko khara rkhye’ harkat na dijiye is ke kal purzon ko zeng lag jaye ga.

سستی کے اس پلندے کیلئے پیٹ یعنی ٹینک میں پٹرول یا ڈیزل ڈالے جائینگے تو اس کا انجام خوب سمجھا جاتا ہے کہ کیا ہو سکتا ہے۔زندگی تو بس یہ ہے کہ انسان متحرک ہو ‘ ہر شعبہ زندگی میں ایک روح رواں ہو اور ہر فعل و عمل میں شعلہ جواں ہو اور ماہ تاباں ہو۔

Susti ke is plnde ke liye pait yani tank mein petrol ya diesel daaley jayengay to is ka injaam khoob samgha jata hai ke kya ho sakta hai. Zindagi to bas yeh hai ke insan mutharrak ho’ har shoba zindagi mein aik rooh rawan ho aur har feal o amal mein shola jawaa ho aur mah taban ho.

اگر آپ کو یہ تحریر اچھی لگی ہے تو آپ کا حق بنتا ہے کہ اس پوسٹ کو سوشل میڈیا پر اپنے دوستوں کے ساتھ شیئر کریں تا کہ ان کی بھی بہتر طور پر رہنمائی ہو سکے۔

شیئر کریں