حسد اور جلن میں فرق

عام طور پر جلن (جیلسی) اور حسد کو ہم معنی تصور کیا جاتا ہے لیکن ان دونوں میں بہت فرق ہے۔ جیلسی درحقیقت ایک طرح کے خوف کی پیداوار ہے۔ یہ کیفیت اپنی کسی صلاحیت یا چیز کے چھن جانے کی وجہ سے پیدا ہوتی ہے۔

یعنی جلن رکھنے والا محرومی کا شکار نہیں ہوتا بلکہ محرومی کے خوف میں مبتلا ہو جاتا ہے۔ عام زندگی میں اس طرح کی کئی مثالیں ملتی ہیں۔

Hasad aur jalan mein farq

Aam tor par jalan ( jealousy ) aur hasad ko hum maienay tasawwur kya jata hai lekin un dono mein bohat farq hai. Jealousy dar haqeeqat aik tarah ke khauf ki pedawar hai. Yeh kefiyat apni kisi salahiyat ya cheez ke chhin janey ki wajah se peda hoti hai.
Yani jalan rakhnay wala mehroomi ka shikaar nahi hota balkay mehroomi ke khauf mein mubtala ho jata hai. Aam zindagi mein is tarah ki kayi misalein millti hain.

ایک ذہین طالب علم کلاس میں ہمیشہ پہلی پوزیشن لیتا ہے، اچانک اس کی کلاس میں ایک نیا طالب علم آتا ہےجو اسی کی طرح ذہین اور لائق ہوتا ہے۔ تو پہلے طالب علم کو خدشات لاحق ہوتے ہیں کہ کہیں اس کی اہمیت میں کمی نہ آئے۔

یہ خدشات اس کے دل میں نئے طالب علم کے لیے منفی جذبات پیدا کرتے ہیں جسے جلن یا جیلسی کہا جاتا ہے۔

Aik zaheen taalib ilm classe mein hamesha pehli position laita hai, achanak is ki classe mein aik naya taalib ilm aata hai jo isi ki tarah zaheen aur laiq hota hai. To pehlay taalib ilm ko khadshaat la-haq hotay hain ke kahin is ki ahmiyat mein kami na aeye.
Yeh khadshaat is ke dil mein naye taalib ilm ke liye manfi jazbaat peda karte hain jisay jalan ya jealousy kaha jata hai.

خدشات کے صحیح ثابت ہونے پر یہ منفی جذبات اور بھی گہرے ہوتے چلے جاتے ہیں۔ اس طرح کے جذبات کا دفاتر میں بھی تجربہ کیا جاتا ہے، جہاں پر ملازم کی خواہش ہوتی ہے کہ اس کے کام کی ہی تعریف کی جائے اور وہ خود اچھی صلاحیتوں کا مالک ہونے کے باوجود اپنے ساتھی ملازمین سے صرف اس لیے جلن محسوس کرتا ہے کہ وہ اس کی خواہش کو پورا کرنے میں رکاوٹ بن رہے ہیں۔

خواتین میں بھی خوبصورتی اور ستائش کے حوالے سے ایک دوسرے کے لیے جیلسی کا عنصر پایا جاتا ہے۔

Khadshaat ke sahih saabit honay par yeh manfi jazbaat aur bhi gehray hotay chalay jatay hain. Is tarah ke jazbaat ka dafatir mein bhi tajurbah kya jata hai, jahan par mulazim ki khwahish hoti hai ke is ke kaam ki hi tareef ki jaye aur wo khud achi salahiyaton ka maalik honay ke bawajood apne saathi mulazmeen se sirf is liye jalan mehsoos karta hai ke wo is ki khwahish ko poora karne mein rukawat ban rahay hain.
Khawateen mein bhi khoubsurti aur sataish ke hawalay se aik dosray ke liye jealousy ka ansar paaya jata hai.

اس کے برعکس حسد کے جذبات اس وقت ابھرتے ہیں جب ایک شخص میں وہ اصاف ہوتے ہیں نہیں ہیں جو سامنے والے شخص میں موجود ہوتے ہیں۔ حسد کسی خوف کے تحت نہیں بلکہ احساس کمتری کی وجہ سے پیدا ہوتا ہے۔

ایک نالائق طالب علم کے ذہن میں ذہین طلبہ کے لیے منفی جذبات، ناپسندیدہ ملازم کا افسر یا اس کے نورنظر ملازم کی طرف منفی جذبہ، واجبی صورت والی لڑکی کا خوبصورت اور غریب کا امیر کے لیے نفرت امیز رویہ حسد کی بڑی مثالیں ہیں۔

Is ke bar aks hasad ke jazbaat is waqt ubhartay hain jab 1 shakhs mein wo asaf hotay hain nahi hain jo samnay walay shakhs mein mojood hotay hain. Hasad kisi khauf ke tehat nahi balkay ehsas kamtaree ki wajah se peda hota hai.
Aik nalaiq taalib ilm ke zehan mein zaheen talba ke liye manfi jazbaat, napasandeedah mulazim ka afsar ya is ke noor e nazar mulazim ki taraf manfi jazba, wajibi soorat wali larki ka khobsorat aur ghareeb ka ameer ke liye nafrat amaze rawayya hasad ki barri misalein hain.

حسد کے جذبات انسان میں ناخوشی کی کیفیت کو تقویت دیتے ہیں۔ کچھ لوگ حسد کا مثبت پہلو ترقی کی ترغیب کو گنواتے ہیں لیکن ایسا نہیں ہے، حسد سے ملتی جلتی ایک اور کیفیت رشک ہے۔

Hasad ke jazbaat insan mein na khushi ki kefiyat ko taqwiyat dete hain. Kuch log hasad ka musbat pehlu taraqqi ki targheeb ko gnwate hain lekin aisa nahi hai, hasad se millti jalti aik aur kefiyat rashk hai.

اگر آپ کو یہ تحریر اچھی لگی ہے تو آپ کا حق بنتا ہے کہ اس پوسٹ کو سوشل میڈیا پر اپنے دوستوں کے ساتھ شیئر کریں تا کہ ان کی بھی بہتر طور پر رہنمائی ہو سکے۔

شیئر کریں