عمامہ باندھنے کا اسلامی طریقہ

حضرت عبد اللہ بن عمر رضی اللہ عنہما بیان فرماتے ہیں: حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم عمامہ شریف باندھتے ہوئے اُسے گولائی میں سرِ اقدس کے گرد لپیٹتے اور آخری حصہ کو سرِاقدس کی پچھلی جانب اُڑس لیتے اور ایک کنارہ دونوں مبارک کندھوں کے درمیان لٹکائے رکھتے۔ (بيهقي، شعب الإيمان، 5: 174، رقم: 6252، ابن عساکر، تاريخ مدينة دمشق، 4: 192)

Hazrat Abdul Allah bin Umar (RA) bayan farmatay hain : Hazoor Nabi Akram (SAW)  Imama shareef bandhte hue ussay golai mein Sar-e-Aqas ke gird lapate aur aakhri hissa ko Sar-e-Aqdas ki pichli janib uraas letay aur aik kinara dono mubarak kaandhon ke darmain latkayega rakhtay.

حضرت عبد اللہ بن عمر رضی اللہ عنہما بیان کرتے ہیں: حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم جب عمامہ شریف باندھتے تو اُس کا شملہ اپنے دونوں کندھوں کے درمیان رکھتے تھے۔ (ترمذي، السنن، 4: 225، رقم: 1736، بيروت، لبنان: دار احياء التراث العربي، بيهقي، شعب الإيمان، 5: 173، رقم:6251، بيروت: دار الکتب العلمية)

Imama bandhne ka tarika kya hai, Imama sharif bandhne ka sunnat tarika in Urdu: Hazrat Abdul Allah bin Umar (RA) bayan karte hain : Hazoor Nabi Akram (SAW) jab Imama shareef bandhte to us ka shimlah apne dono kaandhon ke darmain rakhtay they.

عمرو بن حریث رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں: گویا کہ میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو دیکھ رہا ہوں کہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم منبر پہ ہیں اور آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے سیاہ عمامہ باندھا ہوا ہے, اور اسکے دونوں اطراف کو کندھوں کے درمیان (کمر کی طرف) لٹکایا ہوا ہے۔ (صحیح مسلم:1359، سنن أبی داود:4077)

Umro ban Haris (RA) farmatay hain : Goya ke mein Rasool Allah (SAW) ko dekh raha hon ke aap (SAW) minbar pay hain aur aap (SAW) ne siyah Imama baandha huwa hai, aur uskay dono atraaf ko kaandhon ke darmain (kamar ki taraf) latkaya huwa hai.

اگر آپ کو یہ تحریر اچھی لگی ہے تو آپ کا حق بنتا ہے کہ اس پوسٹ کو سوشل میڈیا پر اپنے دوستوں کے ساتھ شیئر کریں تا کہ ان کی بھی بہتر طور پر رہنمائی ہو سکے۔

شیئر کریں