لقوہ کیا ہے اور کیوں ہوتا ہے

لقوہ کی بیماری چہرے کی "نرو” کی سوجن یا انفیکشن کی وجہ سے ہوتی ہے۔ جس کی وجہ سے چہرہ ٹیڑھا ہو جاتا ہے۔ آنکھیں کھلی رہ جاتی ہیں اور منہ سے پانی نکلتا رہتا ہے۔ آدمی چنگا بھلا سوتا ہے اور صبح اٹھتا ہے تو اچھا بھلا چہرہ ٹیڑھا ہوتا ہے۔

Laqwa ki bemari chehray ki nro ki soojan ya infection ki wajah se hoti hai. Jis ki wajah se chehra terha ho jata hai. Ankhen khuli reh jati hain aur mun se pani nikalta rehta hai. Aadmi changa bhala sota hai aur subah uthta hai to acha bhala chehra terha hota hai.

چہرے کے پٹھوں کو ”فیشیل نرو“ کنٹرول کرتی ہے۔ جس میں انفیکشن، کمزوری یا فالج کے باعث چہرے پر لقوہ ”بیلز پالسی“ ہو جانا ہے۔ دائیں اور بائیں فیشل نرو چہرے کے دونوں جانب سے الگ الگ کام کرتی ہیں۔ یہ نس چہرے، غدود، آواز پیدا کرنے والا ساﺅنڈ بکس، کان کا کچھ حصہ، لعاب دہن، زبان کا اگلہ حصہ، ذائقے کی حس، آواز کے کان میں جانے والے حصے کو کنٹرول کرتی ہے۔ اسی لئے لقوہ میں چہرے کے یہ تمام حصے متاثر ہوتے ہیں۔

Chehray ke pathon ko “facial nerve” control karti hai. Jis mein infection, kamzori ya falij ke baais chehray par Laqwa ho jana hai. Dayen aur baen facial nro chehray ke dono janib se allag allag kaam karti hain. Yeh nas chehray, ghudood, aawaz peda karne wala sound box, kaan ka kuch hissa, luaab dahan, zabaan ka aglaa hissa, zaiqay ki hiss, aawaz ke kaan mein jaaane walay hissay ko control karti hai. Isi liye Laqwa mein chehray ke yeh tamam hissay mutasir hotay hain.

انفیکشن کے باعث چہرے پر آنے سے پہلے والے حصے میں سوزش ہو جاتی ہے جس سے نس کی تمام چھوٹی شاخیں کام کرنا بند کر دتی ہیں۔ لیکن یہ اثرات چہرے کے ایک جانب ہوتے ہیں دونوں جانب نہیں۔ 80 فیصد مریضوں میں لقوہ خود بخود کم ہو جاتا ہے۔

Infection ke baais chehray par anay se pehlay walay hissay mein soozish ho jati hai jis se nas ki tamam chotee shaakhen kaam karna band kar ditti hain. Lekin yeh asraat chehray ke aik janib hotay hain dono janib nahi. 80 fisad mareezon mein Laqwa khud bakhud kam ho jata hai.

فیشیل نرو کی انفیکشن کی اہم وجہ وائرس ہے۔ جو عام طور پر سرد موسم میں بڑھ جاتا ہے۔ اسی باعث ایک زمانے میں یہ خیال کیا جاتا تھا کہ سرد موسم، تیز ہوا، اے سی یا پنکھے کے باعث چہرے کو ہوا لگ جاتی ہے اور لقوہ ہو جاتا ہے۔ جبکہ اس کی وجہ ”وائرس ہرپس سمپلکس“ ہے۔ چند دوسرے وائرس بھی نس کی انفیکشن پیدا کر کے لقوہ کر سکتے ہیں۔ لیکن سردی یا ہوا لگنے سے لقوہ نہیں ہوتا۔

Facial nerve ki infection ki ahem wajah virus hai. Jo aam tor par sard mausam mein barh jata hai. Isi baais aik zamane mein yeh khayaal kya jata tha ke sard mausam, taiz huwa, ae si ya pankhe ke baais chehray ko huwa lag jati hai aur Laqwa ho jata hai. Jabkay is ki wajah herpes simplex virus hai. Chand dosray virus bhi nas ki infection peda kar ke Laqwa kar satke hain. Lekin sardi ya huwa lagne se Laqwa nahi hota.

لقوہ کیا ہے اور کیوں ہوتا ہے۔ لقوہ کی علامات بہت معولی یا بہت شدید ہو سکتی ہیں۔ علامات اچانک ظاہر ہوتی ہیں اور 48 گھنٹوں میں پوری شدت پر آ جاتی ہیں۔

Laqwa ki alamaat bohat mavli ya bohat shadeed ho sakti hain. Alamaat achanak zahir hoti hain aur 48 ghanton mein poori shiddat par aa jati hain. Laqwa kya hai aur kyun hota hai, Lakwa ki alamat aur wajohat kya hain, facial paralysis treatment in Urdu

چہرے کے ایک جانب پٹھوں کی کمزوری، ڈھیلا پن، فالج جیسی کیفیت ہو جاتی ہے۔ متاثرہ جانب آنکھ بند ہو جاتی ہے، آنکھ سے پانی بہنے لگتا ہے، ہونٹ ایک جانب کھنچ جاتے ہیں۔ اس جانب سے تھوک بہنے لگتی ہے۔ کان کے نیچے درد رہتا ہے، ذائقہ کی حس ختم ہو جاتی ہے، کان میں آواز زیادہ تیز یا اونچی سنائی دیتی ہے، جبڑے کے گرد درد ہوتا ہے، زبان لڑکھڑاتی ہے، سر چکراتا یا سربھاری ہو جاتا ہے۔ چہرے کے سارے پٹھے ایک جانب کھنچے محسوس ہوتے ہیں۔

Chehray ke aik janib pathon ki kamzori, dheela pan, falij jaisi kefiyat ho jati hai. Mutasirah janib aankhh band ho jati hai, aankhh se pani behnay lagta hai, hont aik janib khnch jatay hain. Is janib se thook behnay lagti hai. Kaan ke neechay dard rehta hai, zayega ki hiss khatam ho jati hai, kaan mein aawaz ziyada taiz ya onche sunai deti hai, jabray ke gird dard hota hai, zabaan larhkharhti hai, sir chakrata ya sar bhari ho jata hai. Chehray ke saaray pathay aik janib khnche mehsoos hotay hain.

اگر آپ کو یہ تحریر اچھی لگی ہے تو آپ کا حق بنتا ہے کہ اس پوسٹ کو سوشل میڈیا پر اپنے دوستوں کے ساتھ شیئر کریں تا کہ ان کی بھی بہتر طور پر رہنمائی ہو سکے۔

شیئر کریں