متوازن غذا کیا ہے

جس طرح گاڑی کو چلنے کے لیے پیٹرول اور چولہے کو جلنے کے لئے گیس کی ضرورت ہوتی ہےاسی طرح صحت مند رہنے کے لئے متوازن غذا بہت ضروری ہے ۔آپ دنیا جہاں کی کامیابیاں و کامرانیاں حاصل کر لیں، دنیا کے امیر ترین فرد بن جائیں، لیکن اگرآپ کی صحت اچھی نہیں ہے تو آپ کے لیے سب کچھ بے وقعت ہے۔

Jis terha gaari ko chalne ke liye petrol aur choolhay ko jalanay ke liye gas ki zaroorat hoti hai isi terha sehat mand rehne ke liye mutwazan ghaza bohat zaroori hai. Aap duniya jahan ki kamiyabiyan o kamaraniyan haasil kar len, duniya ke Ameer tareen fard ban jayen, lekin agar aap ki sehat achi nahi hai to aap ke liye sab kuch be waqat hai.

اگر صحت اچھی نہ ہو تو انسان بہت سی نیکیوں سے محروم ہو جاتا ہے ۔ وہ روزے نہیں رکھ سکتا۔ حج اور عمرہ نہیں کر سکتا، اگر آپ اچھی صحت چاہتے ہیں تو وہ خوارک استعمال کریں جو اولمپک کے کھلاڑی کرتے ہیں۔

Agar sehat achi na ho to insaan bohat si nakiyon se mahroom ho jata hai. wo rozay nahi rakh sakta. hajj aur omra nahi kar sakta, agar aap achi sehat chahtay hain to wo khwark istemaal karen jo olympic ke khilari karte hain.

یہ لوگ پھل، سبزیاں، بغیر چھنا آٹااور مچھلی کا زیادہ استعمال کرتے ہیں، میدے، چینی اور نمک کا استعمال کم کرتے ہیں۔ روزانہ آٹھ گلاس پانی پیتے ہیں۔ “اگر آپ صحت مند رہنا چاہتے ہیں تو وہ چیزیں کھائیں جو آپ کھانا نہیں چاہیے، مثلاً سبزیاں، اور وہ کریں جو آپ کرنا نہیں چاہتے ، مثلاً ورزش

Ye log phal, sabzian, baghair chhana aata aur machhli ka ziyada istemaal karte hain, maiday, cheeni aur namak ka istemaal kam karte hain.
Rozana aath (8) glass pani peetay hain.” agar aap sehat mand rehna chahtay hain to wo cheeze khayen jo aap khana nahi chahiye, maslan sabzian, aur wo karen jo aap karna nahi chahtay, maslan warzish (exercise).

گیارہ سے اٹھارہ سال کی عمر کے درمیان لڑکے اور لڑکیوں میں بہت سی جسمانی تبدیلیاں رونما ہوتی ہیں۔ اس لیے ضروری ہے کہ اس عمر کے بچوں کے لیے صحت بخش غذا کا انتخاب کیا جائے ۔ یہ وہ عمر ہوتی ہے جب جسم بڑھ رہا ہوتا ہے اس لیے اس وقت غذا میں کمی کرنا مناسب نہیں ۔ متوازن غذا کے استعمال سے ہی نوجوان بچے اپنے آپ کو صحت مند اور چاق و چوبند رکھ سکتے ہیں۔

11 se 18 saal ki Umar ke darmiyan larke aur larkiyon mein bohat si jismani tabdeelian runuma hoti hain. is liye zaroori hai ke is Umar ke bachon ke liye sehat bakhash ghaza ka intikhab kya jaye. ye wo Umar hoti hai jab jism barh raha hota hai is liye is waqt ghaza mein kami karna munasib nahi. Matwazan ghaza ke istemaal se hi nojawan bache apne aap ko sehat mand aur chaaq o choband rakh satke hain.

متوازن غذا مدافعاتی نظام کو تو بہتر بناتی ہی ہے ، ہماری خارجی شخصیت کا بھی بہترین عکس پیش کرتی ہے ۔ اچھی غذا کے اثرات ہماری جلد،  بالوں اور جسمانی ہیئت پر بھی پڑتے ہیں ۔ غذائی ماہرین اس بات پر زور دیتے ہیں کہ صرف متوازن غذا ہی جسم کو مناسب مقدار میں ضروری غذائی اجزا فراہم کرسکتی ہیں

Mutawazan ghiza mdafaati nizaam ko to behtar banati hi hai, hamari kharji shakhsiyat ka bhi behtareen aks paish karti hai. Achi ghiza ke asraat hamari jald, balon aur jismani haiyat par bhi parte hain. Ghizai mahireen is baat par zor dete hain ke sirf mutawazan ghiza hi jism ko munasib miqdaar mein zurori ghizai ajza faraham kar sakti hain.

متوازن غذا مراد سے مراد ایسی غذا ہے جس میں اعلی درجے کی غذائی صلاحیت موجود ہو ۔ جو اضافی کیلوریز سے پاک ہو اور ایسے طریقے سے پکائیں گئی ہو جس سے اس کے غذائی اجزاء محفوظ رہیں اور وہ نظام ہضم کو درہم برہم نہ کرے۔

Mutawazan ghiza morad se morad aisi ghiza hai jis mein aala darjay ki ghizai salahiyat mojood ho. Jo izafi calories se pak ho aur aisay tarike se pakayen gayi ho jis se is ke ghizai ajzaa mehfooz rahen aur woh nizaam hazem ko darham barham na kere.

اگر ہماری خوراک میں ضروری اجزا نہیں ہوں گے تو ہماری خوراک نامکمل اور جسمانی ضروریات کے لحاظ سے تشنہ ہو گی۔ ایسی نامکمل اور غیر متوازن خوراک اگرچہ پیٹ کی آگ بجھا دیتی ہے لیکن جسمانی ضروریات پوری کرنے میں ناکام رہتی ہے جس کا نتیجہ یہ ہوتا ہے کہ ہم مختلف بیماریوں کا شکار ہو جاتے ہیں۔

Agar hamari khoraak mein zurori ajza nahi hon ge to hamari khoraak namukammal aur jismani zaroriat ke lehaaz se tishna ho gi. Aisi namukammal aur ghair mutawazan khoraak agarchay pait ki aag bujha deti hai lekin jismani zaroriat poori karne mein nakaam rehti hai jis ka nateeja yeh hota hai ke hum mukhtalif bimarion ka shikaar ho jatay hain.

جن میں سے بالوں کا گرنا، دانت کمزور ہونا، جسم میں درد کی شکایت، ہڈیوں کی کمزوری، منہ کے چھالے، بدہضمی، تیزابیت، نظر کم زور ہونا، جلد پر دھبے ابھرنا وغیرہ شامل ہیں۔

Jin mein se balon ka girna, daant kamzor hona, jism mein dard ki shikayat, hadion ki kamzori, mun ke chhalay, bad hazmi, tezabiyat, nazar kam zor hona, jald par dhabbay ubharna waghera shaamil hain.

صحت مند لوگ جلدی کامیاب ہوتے ہیں ۔کیونکہ بھرپور کامیابی کے لیے انسان کو سخت محنت کی ضرورت ہوتی ہے اور سخت محنت کے لیے بھرپور توانائی کی ضرورت ہوتی ہے۔بھرپور توانائی کے لیے متوازن غذا، ورزش، آرام اور تفریح وغیرہ کی ضرورت ہوتی ہے۔

Sehat mand loog jaldi kamyaab hotay hain. kyunkay bharpoor kamyabi ke liye insaan ko sakht mehnat ki zaroorat hoti hai avrskht mehnat ke liye bharpoor tawanai ki zaroorat hoti hai. bharpoor tawanai ke liye matwazan ghaza, werzish, aaraam aur tafreeh waghera ki zaroorat hoti hai.

اچھی صحت کے لیے ضروری ہے کہ آپ کی خوراک متوازن ہو۔ اس میں پروٹین، کاربوئیڈریٹس (نشاستہ)، چکنائی (Fats)، معدنیات (Minerals) اور وٹامن شامل ہوں۔

Achi sehat ke liye zaroori hai ke aap ki khwark matwazan ho. is mein protein, nashasta, chiknai ( fats ), madniyaat ( mainerals ) aur vitamin shaamil hon.

کاربوہائیڈریٹ ہمیں اناجوں مثلاً گیہوں، چاول، مکئی، باجرا، جو، جوار، اور جئی سے ملتا ہے۔ نیز آلو، شکر قند، سوجی، میدہ اور ان سے بنی چیزوں سے ہمیں دستیاب ہوتا ہے۔ پروٹین ہمیں گوشت، انڈے، دودھ، سویا بین اور تمام دالوں سے ملتے ہیں۔ جسم کی بڑھوتری اور نشوونما کے لیے پروٹین کی اشد ضرورت ہوتی ہے۔

Corbohydrate hamein anaajon maslan gheehon, chawal, makayi, bajara, jo, jawar, aur jai se milta hai. Neez aalo, shukar qand, sooji, medah aur un se bani cheezon se hamein dastyab hota hai. Protein hamein gosht, anday, doodh, soya bain aur tamam daalon se mlitay hain. Jism ki brhhotri aur nashonuma ke liye protein ki ashad zaroorat hoti hai.

چربی یا چکنائی کو ہم مکھن، دودھ، گھی، تیل، مغزیات، گوشت اور دیگر چکنی چیزوں سے حاصل کرتے ہیں۔ خوراک کے یہ عناصر عام طور پر ہر اوسط خوراک میں شامل ہوتے ہیں۔ تاہم ان کی زیادتی بھی امراض پیدا کرتی ہے۔ مثلاً شکر کا زیادہ استعمال دانتوں کے لیے، ہاضمے کے لیے نیز جگر کے لیے نقصان دہ ہے۔

Charbi ya chiknai ko hum makhan, doodh, ghee, tail, maghziyat, gosht aur deegar chikni cheezon se haasil karte hain. Khoraak ke yeh anasir aam tor par har ost khoraak mein shaamil hotay hain.Taham in ki zayad-ti bhi amraaz peda karti hai. Maslan shukar ka ziyada istemaal danoton ke liye, hazme ke liye neez jigar ke liye nuqsaan da hai.

چکنائی کے زیادہ استعمال کے باعث ہارٹ اٹیک اور بلڈ پریشر جیسے خطرناک مسائل پیدا ہو سکتے ہیں۔ اگر کسی وجہ سے ان اجزا کی مطلوبہ مقدار جسم کو نہیں ملتی تو اس سے کئی خطرناک امراض پیدا ہوتے ہیں۔

Chiknai ke ziyada istemaal ke baais heart attack aur blood pressure jaise khatarnaak masail peda ho satke hain. Agar kisi wajah se in ajza ki matlooba miqdaar jism ko nahi millti to is se kayi khatarnaak amraaz peda hotay hain.

اگر آپ کو یہ تحریر اچھی لگی ہے تو آپ کا حق بنتا ہے کہ اس پوسٹ کو سوشل میڈیا پر اپنے دوستوں کے ساتھ شیئر کریں تا کہ ان کی بھی بہتر طور پر رہنمائی ہو سکے۔

Matwazan Ghaza kya hai aur ye achi sehat ke liye kyun zarori hai – Balance Diet in Urdu. Mutawazan giza ke sehat par asrat ki makamal tafseel Urdu mein
شیئر کریں