محنت میں عظمت ہے

کامیابی ہر اس شخص کو ملتی ہے جو محنت کرتا ہے۔ کوئی بھی کامیابی بغیر محنت کے حاصل نہیں ہوا کرتی۔ انسان محنت کرئے تو کامیابی اس کے قدم چومتی ہے، کیونکہ محنت کامیابی کی کنجی ہے۔

Mehnat ki Azmat: Kamyabi har is shakhs ko millti hai jo Mehnat karta hai. Koi bhi kamyabi baghair Mehnat ke haasil nahi huwa karti. Insaan Mehnat kare to kamyabi is ke qadam chumati hai, kyunkay Mehnat kamyabi ki kunji hai.

ایک بادشاہ نے اپنے ملک کے سارے عقلمند اور دانا لوگ اکٹھے کئے اور اُن سے کہا: میں چاہتا ہوں کہ تم لوگ ایک ایسا نصاب ترتیب دو جس سے میرے ملک کے نوجوانوں کو کامیابی کے اصولوں کا پتہ چل جائے، میں ہر نوجوان کو اُس کی منزل کا کامیاب شخص دیکھنا چاہتا ہوں۔

Aik badshah ne apne mulk ke saaray aqalmand aur dana log ikathay kiye aur un se kaha : mein chahata hon ke tum log aik aisa nisaab tarteeb do jis se mere mulk ke nojawanon ko kamyabi ke usoolon ka pata chal jaye, mein har nojawan ko us ki manzil ka kamyaab shakhs dekhna chahta hon.

یہ دانا لوگ مہینوں سر جوڑ کر بیٹھے اور ہزاروں صفحات پر مشتمل ایک کتاب لکھ کر بادشاہ کے پاس لائے۔ کتاب اپنے آپ میں ایک خزانہ تھی جس میں کامیابی کیلئے اصول و ضابطے، حکمت و دانائی کی باتیں، کامیاب لوگوں کے تجربات و قصے اور آپ بیتیاں و جگ بیتیاں درج تھیں۔

Ye dana log mahino sir joor kar baithy aur hazaron safhaat par mushtamil aik kitaab likh kar badshah ke paas laaye. Kitaab apne aap mein aik khazana thi jis mein kamyabi ke liye usool o zaabtay, hikmat o danai ki baatein, kamyaab logon ke tajarbaat o qissay aur aap bityan o jug bityan darj theen.

بادشاہ نے کتاب کی ضخامت دیکھتے ہی واپس لوٹا دی کہ یہ کتاب نوجوانوں کو کوئی فائدہ نہیں دے سکتی، کیونکہ اسے پڑھتے پڑھتے ان کی عمریں بیت جائیں گے اور وہ اس کتاب میں دیئے گئے کن کن اصولوں پر عمل کریں گے اس لیے جاؤ اور اسے مختصر کر کے لاؤ۔

Badshah ne kitaab ki zakhamat dekhte hi wapas lota di ke ye kitaab nojawanon ko koi faida nahi day sakti, kyunkay usay parhte parhte un ki umrein beeet jayen ge aur wo is kitaab mein diye gay kin kin usoolon par amal karen ge is liye jao aur usay mukhtasir kar ke lao. best Urdu speech on mehnat ki azmat hadees on mehnat ki azmat in urdu

یہ دانا لوگ کتاب کو ہزاروں صفحات سے مختصر کر کے سینکڑوں صفحات میں بنا کر لائے تو بھی بادشاہ نے قبول کرنے سے انکار کر دیا اور کہا کہ مزید مختصر کر کے لاؤ، یہ لوگ دوبارہ کتاب کو سینکڑوں صفحات سے مختصر کر کے بیسیوں صفحات کی بنا کر لائے تو بھی بادشاہ کا جواب انکار میں ہی تھا۔

Ye dana log kitaab ko hazaron safhaat se mukhtasir kar ke senkron safhaat mein bana kar laaye to bhi badshah ne qubool karne se inkaar kar diya. Aur kaha ke mazeed mukhtasir kar ke lao, ye log dobarah kitaab ko senkron safhaat se mukhtasir kar ke bisyon safhaat ki bana kar laaye to bhi badshah ka jawab inkaar mein hi tha.

بادشاہ نے اپنی بات دہراتے ہوئے اُن لوگوں سے کہا کہ تمہارے یہ قصے کہانیاں اور تجربے نوجوانوں کو کامیابی کے اصول نہیں سکھا پائیں گے۔ آخر کار مہینوں کی محنت اور کوششوں سے مملکت کے دانا لوگ صرف ایک جملے میں کامیابی کے سارے اصول بیان کرنے میں کامیاب ہوگئے۔ اور وہ جملہ یہ تھا۔ “بغیر محنت کے کوئی کامیابی حاصل نہیں ہوتی”

Badshah ne apni baat dohraatay hue unn logon se kaha ke tumahray ye qissay kahaniyan aur tajarbay nojawanon ko kamyabi ke usool nahi sikha payen ge. Aakhir-kaar mahino ki Mehnat aur koshisho se mumlikat ke dana log sirf aik jumlay mein kamyabi ke saaray usool bayan karne mein kamyaab hogaye. Aur wo jumla ye tha. “Baghair Mehnat ke koi Kamyabi haasil nahi hoti”

پس اس جملے کو کامیابی کا سنہری اصول قرار دیدیا گیا۔ اور طے پایا کہ یہی اصول ہی ہمت اور جذبے کے ساتھ کسی کو کامیابی کے ساتھ منزل کی طرف گامزن رکھ سکتا ہے۔

Pas is jumlay ko kamyabi ka sunehri usool qarar didya gaya. Aur tey paaya ke yahi usool hi himmat aur jazbay ke sath kisi ko kamyabi ke sath manzil ki taraf gamzan rakh sakta hai.

بعض نوجوان آسان طریقوں سے نوکری حاصل کر لینے کو ہی کامیابی تصور کر لیا کرتے ہیں۔ پھر سالوں کے بعد کام کی زیادتی اور تنخواہ کی کمی کا رونا رو رہے ہوتے ہیں۔ تو کیا آپ جانتے ہیں کہ وہ ایسا کیوں کر رہے ہوتے ہیں؟ کیوں کہ انہوں نے بغیر محنت کے حاصل ہونے والی کامیابی کی خواہش کی تھی۔

Baaz nojawan aasaan tareeqon se nokari haasil kar lainay ko hi kamyabi tasawwur kar liya karte hain. Phir saloon ke baad kaam ki zayad-ti aur thankhowa ki kami ka rona ro rahay hotay hain. To kya aap jantay hain ke wo aisa kyun kar rahay hotay hain? Kyun ke unhon ne baghair Mehnat ke haasil honay wali kamyabi ki khwahish ki thi.

.اسی لئے تو کہا جاتا ہے کہ: کامیابی کیلئے منتخب کئے ہوئے آسان اور مختصر راستے (شارٹ کٹس) ہمیشہ کم فائدے اور کم لذت دیا کرتے ہیں۔ اس کے بر عکس جو لوگ محنت اور مشقت کے ساتھ راتوں کو جاگ جاگ کر کام کیا کرتے ہیں اُن کی آمدنیاں اور فوائد تنخواہوں سے ہزار ہا درجے اچھی ہوا کرتی ہیں اور وہ ایک بہتر زندگی جیا کرتے ہیں۔

Isi liye to kaha jata hai ke : kamyabi ke liye muntakhib kiye hue aasaan aur mukhtasir rastay ( shortcuts ) hamesha kam faiday aur kam lazzat diya karte hain. Is ke bar aks jo log Mehnat aur mushaqqat ke sath raton ko jaag jaag kar kaam kya karte hain unn ki income aur fawaid tankhwahon se hazaar ha darjay achi huwa karti hain aur wo aik behtar zindagi jiya karte hain.

دنیا میں کسی بھی انسان نے سفارش اور رشوت سے وہ ترقی حاصل نہیں کی جو محنت سے حاصل کی، ورنہ دلی کا کوئی عام سا لڑکا کبھی شاہ رخ خان نہ بنتا اور امیتابھ بچن کا بیٹا پندرہ سال سے فلموں میں آنے کے باوجود اسٹار نہ بن سکا، ایسا نہیں ہوتا، ہاں یہ ضرور ہے کہ سفارش یا رشوت کے بل بوتے پر کوئی باپ اپنے بیٹے کو میدان تک تو پہنچا دے گا لیکن وکٹ پر کھڑے ہوکر بلا اسے خود ہی گھمانا ہوگا اور اس وقت قسمت سفارش دیکھ کر نہیں آتی، آپ کے پاس محنت سے آتی ہے۔

Duniya mein kisi bhi Insaan ne sifarish aur rishwat se wo taraqqi haasil nahi ki jo Mehnat se haasil ki, warna dili ka koi aam sa larka kabhi Shah Rukh Khan na banta.

Aur Amitabh Bachchan ka beta 15 saal se filmon mein anay ke bawajood star na ban saka, aisa nahi hota, haan ye zaroor hai ke sifarish ya rishwat ke bil botay par koi baap apne betay ko maidan tak to pouncha day ga lekin wicket par kharray hokar bulaa usay khud hi ghumana hoga aur is waqt qismat sifarish dekh kar nahi aati, aap ke paas Mehnat se aati hai

تاریخ گواہ ہے کہ ہر عظیم مؤجد، شخصیت، کاریگر یا عالم نے اپنی راحت و آرام والی زندگی کو فنا کر کے ہی کامیابیاں حاصل کیں۔ تھامس ایڈیسن ایسے لوگوں میں سے ایک مثال ہے جس نے بلب کی موجودہ شکل کو کامیابی سے ہمکنار کرنے کرنے کیلئے ایک ہزار مرتبہ کوششیں کیں۔ اگر وہ اس قانون (جان لو کہ بغیر محنت کے کوئی کامیابی حاصل نہیں ہوا کرتی) پر اعتقاد رکھنے والے نہ ہوتا تو شاید دس بار ناکامیوں کا منہ دیکھنے کے بعد اپنے نظریئے کو سمیٹ لیتا۔

Tareekh gawah hai ke har azeem mojad, shakhsiyat, karigar ya aalam ne apni raahat o aaraam wali zindagi ko fanaa kar ke hi kamiyabiyan haasil kee. Thomas edison aisay logon mein se aik misaal hai jis ne bulb ki mojooda shakal ko kamyabi se humkenar karne karne ke liye aik hazaar martaba koshishen kee.

Agar wo is qanoon ( jaan lau ke baghair Mehnat ke koi kamyabi haasil nahi huwa karti ) par aitqaad rakhnay walay na hota to shayad das baar nakamiyoo ka mun dekhnay ke baad apne nazriye ko samaitt laita. hadees on mehnat ki azmat in Urdu mehnat ki azmat speech

محنت کی عظمت اسلام کی نظر میں

حضرت محمد مصطفیٰ صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنی قوم کو اسلام پر لانے کیلئے کتنی کوششیں کیں؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے دعوۃ حق کو لوگوں تک پہنچانے کیلئے کتنی اذیتیں اور تکلیفیں اُٹھائیں؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے کیسے کیسے صبر کیئے؟ سرکار صلی اللہ علیہ وسلم تو ایسی نیند کو جانتے تک بھی نہیں تھے جس نیند سے ہم لطف اندوز ہوتے ہیں، اور اسی بے آرامی میں ہی اپنے خالق حقیقی سے جا ملے۔

Mehnat ki azmat In Islam

Hazrat Muhammad Mustafa (SAW) ne apni qoum ko Islam par laane ke liye kitni koshishen kee? Aap (SAW) ne davh haq ko logon tak pohanchanay ke liye kitni azeeyaten aur takleifein uthain? Aap (SAW) ne kaisay kaisay sabr kiye? Sarkar (SAW) to aisi neend ko jantay tak bhi nahi they jis neend se hum lutaf andoz hotay hain, aur isi be aarami mein hi apne khaaliq haqeeqi se ja miley.

عمر بن عبدالعزیز سے جب ان کے اہل خانہ کہتے کہ ہمارے لئے تھوڑی سی فراغت نہیں نکالو گے؟ تو وہ کہتے تھے: کیسی فراغت ، کیسی فرصت اور کیسا آرام؟ اب تو شجرۃ طوبیٰ (جنت میں ایک درخت کا نام) کے نیچے بیٹھ کر ہی آرام ملے گا (یعنی جنت میں جا کر ہی آرام نصیب ہوگا)۔

Umar ban Abdul aziz se jab un ke ahal khana kehte ke hamaray liye thori si faraghat nahi nikalu ge? To wo kehte they : kaisi faraghat, kaisi fursat aur kaisa aaraam? Ab to shajrah tuba ( jannat mein aik darakht ka naam ) ke neechay baith kar hi aaraam miley ga ( yani jannat mein ja kar hi aaraam naseeb hoga ).

امام احمد بن حنبل کی سیرت بیان کرتے ہوئے ابی زرعۃ لکھتے ہیں کہ: احمد (بن حنبل) دس دس لاکھ احادیث یاد رکھتے تھے۔ تو کیا یہ دس لاکھ احادیث سو کر اور عیش و آرام سے یاد ہو جاتی تھیں؟ محمد بن اسماعیل کہتے ہیں کہ احمد بن حنبل کا ہمارے پاس سے ایسے گزر ہوا کہ انہوں نے اپنی جوتیاں ہاتھوں میں اُٹھائی ہوئی تھیں اور وہ بغداد کے گلی کوچوں میں ایک درس سے نکل کر دوسرے درس میں جانے کیلئے بھاگتے پھرتے تھے۔

Imam ahmed bin hanbal ki seerat bayan karte hue abi zarha likhte hain ke : ahmed ( bin hanbal ) das das laakh ahadees yaad rakhtay they. To kya ye das laakh ahadees so kar aur aish o aaraam se yaad ho jati theen? Muhammad bin ismael kehte hain ke ahmed bin hanbal ka hamaray paas se aisay guzar huwa ke unhon ne apni jotiyan hathon mein uthai hui theen aur wo bghdad ke gali kochoon mein aik dars se nikal kar dosray dars mein jaane ke liye bhagtay phirtay they.

سندر پچائی کی کہانی

سندر انڈیا کے علاقے چنائی میں رہنے والے ایک عام سے لڑکے تھے، کوئی بات ایسی خاص نہ تھی جو انھیں عام لڑکوں سے جدا کرتی، گھر کے حالات بھی کوئی بہت زیادہ اچھے نہیں تھے، ان کے والد ایک چھوٹی سی کمپنی میں الیکٹریکل انجینئر تھے، بہت غریب نہیں تھے وہ لوگ، لیکن ایک اسکوٹر خریدنے کے لیے بھی سندر کے والد کو تین سال تک پیسے جوڑنے پڑے تھے۔

Sundar Pichai ki kahani

Sunder india ke ilaqay chennai mein rehne walay aik aam se larke they, koi baat aisi khaas na thi jo unhein aam larkoon se judda karti, ghar ke halaat bhi koi bohat ziyada achay nahi they, un ke waalid aik choti si company mein Electrical Engineer they, bohat ghareeb nahi they wo log, lekin aik scooter khareednay ke liye bhi sunder ke waalid ko teen saal tak pesey jornay parre they.

سندر کے والد نے اپنے بیٹے کے ساتھ ایک اچھی بات کی، دن بھر جب وہ کام کرکے واپس آتے تو تھکن کی شکایت نہیں کرتے کہ سارا دن انھیں بھاری مشینوں کے ساتھ کام کرنا پڑا بلکہ وہ اپنے بیٹے کو یہ بتاتے کہ زندگی میں انھیں کیا چیلنج ملے اور انھوں نے ان کا کس طرح سامنا کیا۔ اس سے سندر کو زندگی کی مشکلات یا ان کا حل ڈھونڈنا ایک گیم جیسا لگنے لگا نہ کہ امتحان جیسا، جسے آپ جوش سے کھیلتے ہیں ڈر کر محض پار کرنے کی کوشش نہیں کرتے۔

Sunder ke waalid ne apne betay ke sath aik achi baat ki, din bhar jab wo kaam kar kay wapas atay to thakan ki shikayat nahi karte ke sara din unhein bhaari machinon ke sath kaam karna para balkay wo apne betay ko ye batatay ke zindagi mein unhein kya challenge miley aur unhon ne un ka kis terha saamna kya.

Is se sunder ko zindagi ki mushkilaat ya un ka hal dhondhna aik game jaissa lagnay laga na ke imthehaan jaissa, jisay aap josh se khailtay hain dar kar mehez paar karne ki koshish nahi karte.

سندر کے والد اس سے بھی مشورہ کرتے کہ بتاؤ مجھے کیا کرنا چاہیے؟ پھر وہ سندر کو پانچ منٹ اکیلے سوچنے کو چھوڑ دیتے اور کہتے اب تم اس کا حل نکالو جس سے ان میں لیڈر شپ کوالٹی اور سیکھنے کی استعداد پیدا ہوتی، چاہے سندر کا بتایا ہوا حل درست نہ بھی ہوتا پھر بھی ان کے والد ان کی ہمت افزائی کرتے جس سے ان کے اعتماد میں اضافہ ہوتا۔

Sunder ke waalid is se bhi mahswara karte ke batao mujhe kya karna chahiye? Phir wo sunder ko paanch minute akailey sochnay ko chor dete aur kehte ab tum is ka hal nikalu jis se in mein leader ship quality aur seekhnay ki istedad peda hoti, chahay sunder ka bataya huwa hal durust na bhi hota phir bhi un ke waalid un ki himmat afzai karte jis se un ke aetmaad mein izafah hota.

سندر کے والد نے انھیں یہ بھی سکھایا کہ زندگی میں چھوٹی چھوٹی باتوں کی بھی اہمیت سمجھو، اپنی یادداشت کو بہتر بنانے کی کوشش کرو جس پر سندر نے بچپن سے ہی کام کیا، ان کے والد کسی بھی وقت، کسی بھی رشتے دار کا فون نمبر پوچھ لیتے اور وہ انھیں یاد ہوتا اسی لیے انھیں زندگی میں یاد کیا کوئی نمبر کبھی نہیں بھولا۔

Sunder ke waalid ne unhein ye bhi sikhaya ke zindagi mein choti choti baton ki bhi ahmiyat samjhoo, apni yad dasht ko behtar bananay ki koshish karo jis par sunder ne bachpan se hi kaam kya, un ke waalid kisi bhi waqt, kisi bhi rishte daar ka phone number pooch letay aur wo unhein yaad hota isi liye unhein zindagi mein yaad kya koi number kabhi nahi bhola.

دماغی محنت کے ساتھ وہ جسمانی محنت بھی کرتے، کرکٹ کھیلتے اور اس میں اپنی پوری جان لگادیتے، اسی لیے وہ اپنے اسکول کی کرکٹ ٹیم کے کپتان بھی تھے، سندر میں کچھ بہت خاص نہیں تھا لیکن ان کے والد نے انھیں خاص بننے کا طریقہ سمجھایا جو محنت ہے اور انھیں اعتماد دینے میں کوئی کمی نہیں چھوڑی، خود حالات بہت اچھے نہیں تھے لیکن پھر بھی اپنے دونوں بیٹوں کو انڈیا کے بہترین انجینئرنگ کالج میں بھیجا۔

Dimaghi Mehnat ke sath wo jismani Mehnat bhi karte, cricket khailtay aur is mein apni poori jaan lgadite, isi liye wo apne school ki cricket team ke captain bhi they, sunder mein kuch bohat khaas nahi tha lekin un ke waalid ne unhein khaas ban’nay ka tarika samjhaya jo Mehnat hai aur unhein aetmaad dainay mein koi kami nahi choari, khud halaat bohat achay nahi they lekin phir bhi apne dono beiton ko india ke behtareen engineering college mein bheja.

سندر نے انجینئرنگ مکمل کی اور پھر اعلیٰ تعلیم کے لیے اسکالر شپ پر امریکا آگئے۔ انھوں نے یہاں دو ماسٹرز کیے اور پھر اپنے کیریئر کا آغاز امریکا سے ہی کیا، 2004 میں انھوں نے دنیا کی سب سے بڑی کمپنی گوگل میں کام کرنا شروع کیا لیکن سندر اس کمپنی کے ہزاروں ملازمین میں سے ایک تھے، کوئی بڑی یا خاص پوزیشن نہیں تھی لیکن انھوں نے محنت، اعتماد اور مسائل کا سامنا کرنے اور ان کا حل تلاش کرنے کی اپنی خوبیوں کو اور جلا بخشی۔

Sunder ne engineering mukammal ki aur phir aala taleem ke liye askalr ship par america aagaye. Unhon ne yahan do masters kiye aur phir apne career ka aaghaz america se hi kya, 2004 mein unhon ne duniya ki sab se barri company Google mein kaam karna shuru kya.

Sunder is company ke hazaron mulazmeen mein se aik they, koi barri ya khaas position nahi thi lekin unhon ne Mehnat, aetmaad aur masail ka saamna karne aur un ka hal talaash karne ki apni khoobiyon ko aur jala bakhsh. Urdu speech on topic mehnat ki azmat taqreer mehnat ki azmat

آج پوری دنیا سندر کا نام لے رہی ہے۔سندر پچائی دنیا کی سب سے بڑی کمپنی گوگل کے CEO ہیں، ان کی نیٹ ورتھ 120 بلین ڈالر اور سالانہ آمدن 200 ملین ڈالرز ہے اور دنیا کے ٹاپ ٹین اسٹرانگ سی اوز میں سے ایک ہیں۔

Aaj 2015 mein poori duniya sunder ka naam le rahi hai. Sundar pichai duniya ki sab se barri company Google ke CEO hain, un ki net worth is waqt daidh so million dollars hai aur duniya ke taap teen astrang si avz mein se aik hain.

آج ان کا چرچا دنیا بھر میں ہے لیکن آج بھی جب وہ کسی بڑی میٹنگ میں ہوتے ہیں اور کسی مسئلے میں پھنس جاتے ہیں تو وہ کمرے سے پانچ منٹ کے لیے نکل جاتے ہیں اور پھر اس کا حل لے کر واپس آتے ہیں، اس پانچ منٹ میں وہ وہی بچہ ہوجاتے ہیں جو جانتا ہے کہ محنت کریں تو قسمت بھی آپ کے ساتھ ہوتی ہے۔ ہمارے ہر بچے میں ’’سندر‘‘ موجود ہے، اسے ختم نہ ہونے دیں، اپنے بچوں کو سمجھا دیں کہ آج ’’سندر‘‘ وہاں ہوسکتا ہے تو کل تم کیوں نہیں؟؟

Aaj un ka charcha duniya bhar mein hai lekin aaj bhi jab wo kisi barri meeting mein hotay hain aur kisi maslay mein phas jatay hain to wo kamray se paanch minute ke liye nikal jatay hain aur phir is ka hal le kar wapas atay hain, is paanch minute mein wo wohi bacha ho jatay hain jo jaanta hai ke Mehnat karen to qismat bhi aap ke sath hoti hai.

Hamaray har bachay mein ” sunder” mojood hai, usay khatam na honay den, apne bachon ko samgha den ke aaj sunder wahan ho sakta hai to kal tum kyun nahi? ?

چاہے آپ کے وسائل نہ بھی ہوں پھر بھی بچوں کو یہی یقین دلانا چاہیے کہ کل تم دنیا کے سب سے کامیاب انسان بنوگے، تم کو بڑے ہوکر نوکری صرف اس لیے نہیں کرنی ہوگی کہ اپنا گھر چلاؤ بلکہ اس لیے کہ آج محنت کرنی ہے تاکہ آنے والے کل میں دنیا کو بدل سکو، اگر بچہ خود یہ سوال کرے کہ میں یہ سب کیسے کرسکتا ہوں؟ تو اسے جواب دیں کہ جیسے سندر پچھائی نے کیا۔

Chahay aap ke wasail na bhi hon phir bhi bachon ko yahi yaqeen dilana chahiye ke kal tum duniya ke sab se kamyaab Insaan bano gay, tum ko barray hokar nokari sirf is liye nahi karni hogi ke apna ghar chalao balkay is liye ke aaj Mehnat karni hai taakay anay walay kal mein duniya ko badal sakuu, agar bacha khud ye sawal kere ke mein ye sab kaisay karsaktha hon? To usay jawab den ke jaisay sunder ne kya.

Mehnat ki azmat essay in Urdu and Hindi, mehnat ki barkatain aur fawide, mehnat mein azmat hai speech essay poetry note in Roman urdu, Mehnat Kamyabi ka raaz hai.

راجر فیڈرر دنیائے ٹینس کے بے تاج بادشاہ ہیں، ان کی ٹینس کورٹ میں مہارت کے سبھی معترف ہیں۔ تاہم یہ بات اہم ہے کہ وہ ایک وقت میں کورٹ میں بطور بال بوائے کام کرتے تھے۔انہوں نے اپنے فنی کئیرئیر کاآغازاپنے آبائی علاقے میں بیسل ٹورنا منٹ میں بطور بال بوائے کے طور پر کام کیا،جو سوئس انڈورز میں کھیلے گئے۔اسکے بعد وہ عام بچوں کی طرح آرمی میں بھی گئے ۔

Roger Federer dunyae tennis ke be taaj badshah hain, un ki tennis court mein mahaarat ke sabhi mutarrif hain. Taham ye baat ahem hai ke wo aik waqt mein court mein bator baal boy kaam karte they. Unhon ne apne fani career ka aghaz apne aabadi ilaqay mein basal torna minute mein bator baal boy ke tor par kaam kya, Uskay baad wo aam bachon ki terha army mein bhi gay.

راجر فیڈرر نے 1998 میں پروفیشنل ٹینس کھیلنا شروع کی اور 2002 سے لے کر نومبر 2014 تک وہ مسلسل دنیا کے دس بہترین ٹینس کھلاڑیوں کی فہرست میں شامل رہے۔اور اس وقت عالمی رینکنگ میں دوسری پوزیشن پر ہیں۔

Roger Federer ne 1998 mein professional tennis khelna shuru ki aur 2002 se le kar november 2014 tak wo musalsal duniya ke das behtareen tennis khiladion ki fehrist mein shaamil rahay. Aur is waqt aalmi ranking mein doosri position par hain.

ابو حاتم الرازی کہتے ہیں کہ میں نے علم کے حصول کیلئے ڈھائی ہزار میل کا پیدل سفر کیا۔ اور اسی طرح ماضی و حاضر کی تاریخ کے صفحات پلٹتے جائیے، آپ دیکھیں گے کہ کامیاب لوگوں نے اپنی زندگی کے اوائل اور جوانی میں کس قدر کٹھن اور سخت محنت کی، مگر اس کے بعد وہ اپنی محنتوں کے ثمر سے بھی تو خوب بہرہ ور ہوئے۔

Abbu Hatim ul raazi kehte hain ke mein ne ilm ke husool ke liye dhai hazaar mil ka paidal safar kya. Aur isi terha maazi o haazir ki tareekh ke safhaat palatne jaiye, aap dekhen ge ke kamyaab logon ne apni zindagi ke awail aur jawani mein kis qader kathin aur sakht Mehnat ki, magar is ke baad wo apni Mehnaton ke samar se bhi to khoob behra war hue.

آج تاریخ جن لوگوں کے ناموں سے سجی ہوئی ملتی ہے اُن کی زندگیاں محنت سے عبارت ہیں، اور پھر اسی محنت کے ثمرات سے انہوں نے دنیا و آخرت میں (بإذن الله) کامیابی اور فلاح پائی۔

Aaj tareekh jin logon ke naamon se saji hui millti hai unn ki zindaganian Mehnat se ibaarat hain, aur phir isi Mehnat ke smrat se unhon ne duniya o akhirat mein kamyabi aur falah payi.

کامیابی مسلسل محنت اور جدوجہد سے ملتی ہے۔ مسلسل جدو جہد سے مراد ہے مسلسل لگے رہنا۔ اور ’’اللہ کی رحمت سے کبھی ناامید(مایوس) نہ ہونا‘‘۔انسانی فطرت ہے کہ انسان جلد اکتا جاتا ہے یا مایوس ہوکر جدوجہد ترک کردیتا ہے ۔ انسان کی یہی جلد باز فطرت اسے کوئی بھی کام استقلال کے ساتھ نہیں کرنے دیتی۔

Kamyabi musalsal Mehnat aur jad-o-jehad se millti hai. Musalsal jaddo jehed se morad hai musalsal lagey rehna. Aur “Allah ki rehmat se kabhi na umeed ( mayoos ) na hona”. Insani fitrat hai ke Insaan jald ukta jata hai ya mayoos hokar jad-o-jehad tark kar deta hai. Insan ki yahi jald baz fitrat usay koi bhi kaam istiqlal ke sath nahi karne deti.

انسان جب کسی کام کو شروع کرتا ہے تو بہت بہت بڑی امیدیں اس کے ساتھ وابستہ کرلیتا ہے۔ اب چونکہ انسان کی فطرت میں جلد بازی کا عنصر ہے اس لیے وہ اپنے کام یا اعمال کا نتیجہ بھی فوری طور پر دیکھنا چاہتاہے۔ چنانچہ جب فطرت اپنے تقاضوں کو پورا کرتےہوئے اس کےکام کے نتائج کوقدرےتاخیر کے ساتھ ظاہرکرتی ہے تو وہ مایوس ہوجاتا ہے۔

Insaan jab kisi kaam ko shuru karta hai to bohat bohat barri umeeden is ke sath wabsta karleta hai. Ab chunkay Insaan ki fitrat mein jald baazi ka ansar hai is liye wo apne kaam ya aamaal ka nateeja bhi fori tor par dekhna chahtahe. Chunancha jab fitrat apne taqazoon ko poora karte hue is ke kaam ke nataij ko qadray takheer ke sath zahrkrti hai to wo mayoos hojata hai.

اس کائنات کی عمر ، اس میں موجود ستاروں ، سیاروں اور کہکشائوں کی تخلیق اور ان کے اندر پایا جانے والا وہ عظیم الشان نظامِ قدرت جو ان کو سنبھالتا ہے نہایت صبرو تحمل کے ساتھ اپنی دھن میں لگا ہوا ہے۔ کسی چیز کو کہیں جانے کی جلدی نہیں ۔انسان اس دنیاوی زندگی کے لیے بہت دوڑ دھوپ کرتا ہے، حالانکہ اگر وہ صبر کے ساتھ ایک کام میں لگا رہے تو قدرت پر واجب ہوجاتا ہے کہ اسے کامیابی عطا کرے۔

Is kaayenaat ki umar, is mein mojood sitaron, sayyaron aur kehkashaon ki takhleeq aur un ke andar paaya jaane wala wo azeem al shan nizam qudrat jo un ko sambhaalta hai nihayat sbro tahhaamul ke sath apni dhun mein laga huwa hai. Kisi cheez ko kahin jaane ki jaldi nahi. Insaan is dunyawi zindagi ke liye bohat daud dhoop karta hai, halaank agar wo sabr ke sath aik kaam mein laga rahay to qudrat par wajib hojata hai ke usay kamyabi ataa kere.

بعض اوقات کسی انسان کی کامیابی قدرت کی جانب سے اس لیے بھی مؤخر کردی جاتی ہے کہ یا تو اسے اس کامیابی کے بدلے کچھ اور بڑی چیز عطا کرنا مقصود ہوتی ہے یا اس کام میں اس انسان کے لیے خیر نہیں ہوتی۔ اسی لیے قرآن پاک میں صبر کرنے والوں کو اللہ تعالیٰ نے پسند فرمایا ہے: ’’بے شک اللہ صبر کرنے والوں کے ساتھ ہے‘‘۔

Baaz auqaat kisi Insaan ki kamyabi qudrat ki janib se is liye bhi mokhir kar di jati hai ke ya to usay is kamyabi ke badlay kuch aur barri cheez ataa karna maqsood hoti hai ya is kaam mein is Insaan ke liye kher nahi hoti. Isi liye Quran pak mein sabr karne walon ko Allah taala ne pasand farmaya hai : “be shak Allah sabr karne walon ke sath hai”.

مسلسل جدو جہد درحقیقت انسانی صبرو تحمل کا امتحان ہوتی ہے۔ قرانِ پاک نے کسی بھی طرح کی محنت کے لیے ایک بنیادی اُصول مقررکیا ہے اوریہ ہے کہ “انسان کے لیے کوشش کے سوا کچھ نہیں” انسان مسلسل محنت کرسکتاہے، نتائج کی ذمہ داری اُس کی نہیں ہے۔ایک حدیثِ اقدس کے مطابق ’’جو جما رہا وہ اُگ گیا‘‘۔ یعنی جس نے مسلسل محنت کی وہ ضرور کامیاب ہوا۔

Musalsal jaddo jehed dar haqeeqat insani sbro tahhaamul ka imthehaan hoti hai. Qran pak ne kisi bhi terha ki Mehnat ke liye aik bunyadi aُsol mqrrkya hai avrih hai ke” Insaan ke liye koshish ke siwa kuch nahi” Insaan musalsal Mehnat krsktahe, nataij ki zimma daari uss ki nahi hai. Aik hadees aqes ke mutabiq “jo jama raha wo ugg gaya”. Yani jis ne musalsal Mehnat ki wo zaroor kamyaab huwa.

دنیا میں بہت سے افراد ایسے ہیں کہ وہ کسی کام کو دیکھ کر متاثر ہوتے ہیں ، پھران کے دل میں یہ جذبہ پیدا ہوتا ہے کہ وہ بھی اس کام کو کریں، پھر اسباب اور ذرائع پرغور کرکے انہیں بھی اکٹھا کر لیتے ہیں اور اس کام کا آغاز ہو جاتا ہے۔چند دن تک تو وہ کام بہت خوش و خروش سے کیا جاتا ہے اور آہستہ آہستہ اس میں کمی واقعی ہوجاتی ہے ۔

Duniya mein bohat se afraad aisay hain ke wo kisi kaam ko dekh kar mutasir hotay hain, phran ke dil mein ye jazba peda hota hai ke wo bhi is kaam ko karen, phir asbaab aur zaraye prghor kar kay inhen bhi akhatta kar letay hain aur is kaam ka aaghaz ho jata hai. Chand din tak to wo kaam bohat khush o kharosh se kya jata hai aur aahista aahista is mein kami waqai ho jati hai.

پہلے سا شوق نہیں رہتا اور پھر ایک دن آتا ہے جب یہ تمام اسباب و وسائل اپنے مطلوبہ نتائج پیدا کرنے کی بجائے سرد مہری کا شکار ہو جاتے ہیں۔ ان پر گرد جمنے لگتی ہے اور جو کام بہت خوش و خروش سے شروع کیا گیا تھا۔ اس کا انجام بجز خسارے کے اور کچھ نہیں نکلتا۔ یہ تعمیری کام مطلوبہ نتائج تک نہیں پہنچتے ! آخر کیوں ؟

Pehlay sa shoq nahi rehta aur phir aik din aata hai jab ye tamam asbaab o wasail apne matlooba nataij peda karne ki bajaye sard mehri ka shikaar ho jatay hain. Un par gird jamnay lagti hai aur jo kaam bohat khush o kharosh se shuru kya gaya tha. Is ka injaam bajuz khasaray ke aur kuch nahi nikalta. Ye tameeri kaam matlooba nataij tak nahi pahunchte! Aakhir kyun ?

اس لیے کہ کسی بھی کام کو اس کے مطلوبہ نتائج تک پہنچانے کے لیے صرف یہی ضروری نہیں کہ انسان میں شوق اور ہمت ہو، ایک بہت ضروری چیز تسلسل کے ساتھ محنت کرنا بھی ضروری ہے۔ جو لوگ کسی کام کو تسلسل اور محنت کے ساتھ کرتے رہتے ہیں وہ اپنی ناؤ کو ایک دن ضرور ساحل تک پہنچا کرہی رہتے ہیں ـ

Is liye ke kisi bhi kaam ko is ke matlooba nataij tak pohanchanay ke liye sirf yahi zurori nahi ke Insaan mein shoq aur himmat ho, aik bohat zurori cheez tasalsul ke sath Mehnat karna bhi zurori hai. Jo log kisi kaam ko tasalsul aur Mehnat ke sath karte rehtay hain wo apni nao ko aik din zaroor saahil tak pouncha kar hi rehtay hain

انسان دائرہ شریعت میں رہ کر اپنی روزی کمانے کے لیےجو اور جیسی بھی محنت کرے خواہ وہ محنت جسمانی ہو یا دماغی، اسلام اس کی اجازت دیتا ہے اور اجازت ہی نہیں دیتا ہے بلکہ محنت کر نے پر ابھارتا ہے اور جو لوگ اپنا پسینہ بہا کر اپنی روٹی حاصل کرتے ہیں ان کو عزت کی نگاہ سے دیکھتا ہے۔

Insaan daira shariat mein reh kar apni rozi kamanay ke liye jo aur jaisi bhi Mehnat kere khuwa wo Mehnat jismani ho ya dimaghi, Islam is ki ijazat deta hai aur ijazat hi nahi deta hai balkay Mehnat kar ne par abharta hai aur jo log apna paseena baha kar apni rootti haasil karte hain un ko izzat ki nigah se daikhta hai.

اسلام ان لوگوں کو ناپسند کرتا ہے جو بغیر محنت کے دوسرو ں کے سہارے اپنا پیٹ پالتے ہیں،اسلام جسمانی اور معمولی محنت کے کام کرنے والوں کووہی بلنددیتا ہے۔ جو مملکت کی بڑی سے بڑی شخصیت کو حاصل ہوتا ہے اور یہ حق ان کو محض نظری اور قانونی طور پر نہیں دیا گیا ہے بلکہ اسلام کے اصلی نمائندوں نے اپنے عمل اور اپنی سیرت سے اس کا ثبوت دیا ہے۔

Islam un logon ko napasand karta hai jo baghair Mehnat ke dosron ke saharay apna pait paltay hain, Islam jismani aur mamooli Mehnat ke kaam karne walon ko wohi baland deta hai. Jo mumlikat ki barri se barri shakhsiyat ko haasil hota hai aur ye haq un ko mehez nazri aur qanooni tor par nahi diya gaya hai balkay Islam ke asli numaindon ne apne amal aur apni seerat se is ka saboot diya hai.

انبیا ء کرام جو اپنے اخلاق و کردار اور عزت و شرافت کے اعتبار سے پوری انسانیت کا جو ہر ہیں انہوں نے خود محنت اور مزدوری کی ہے اوردوسروں کی بکریاں چرا کر اور گلہ بانی کر کے روزی کمائی ہے۔

Anabia hamza karaam jo apne ikhlaq o kirdaar aur izzat o sharafat ke aitbaar se poori insaaniyat ka jo har hain unhon ne khud Mehnat aur mazdoori ki hai aur dosron ki bakriyan chura kar aur gilah baani kar ke rozi kamaai hai.

محنت کی عظمت حدیث مبارکہ کی روشنی میں

اس سے بہتر کوئی کھانا نہیں ہے جو آدمی اپنے ہاتھوں سے کما کر کھاتا ہے۔ ( مشکٰوۃ ص24)

Mehnat ki azmat hadees mubarikah ki roshni mein

Is se behtar koi khana nahi hai jo aadmi apne hathon se kama kar khata hai.

حضرت داؤد علیہ السلام اپنے ہاتھوں سے اپنی روزی کماتے تھے اسی طرح حضرت موسٰی علیہ الصلٰوۃ والسلام کی مزدوری کا قرآن پاک میں جو ذکر ہے اس کا ذکر کر کے آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : انہوں نے آٹھ یادس برس تک اس طرح مزدوری کہ کہ اس پوری مدت میں وہ پاک دامن بھی رہے اور اپنی مزدوری کو بھی پاک رکھا۔ (مشکٰوۃ ص 252)

Hazrat Dawod (AS) apne hathon se apni rozi kamate they isi terha Hazrat Moose (AS) ki mazdoori ka Quran pak mein jo zikar hai is ka zikar kar ke Anhazrat (SAW) ne farmaya : unhon ne aath ya dasbaras tak is terha mazdoori ke ke is poori muddat mein wo pak daman bhi rahay aur apni mazdoori ko bhi pak rakha.

آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ان چند انبیاء کرام ہی کااُسوہ پیش نہیں کیا بلکہ ایک حدیث میں فرمایا : خدا نے جتنے انبیاء بھیجے ہیں ان سب نے بکریاں چرائی ہیں۔ صحابہ نے دریافت کیا کہ یا رسول اللہ آپ نے بھی بکریاں چرائی ہیں۔ فرمایا ہاں میں بھی چند قیرا طوں کے عوض اہل مکہ کی بکریاں چرایا کرتا تھا۔ (مشکٰوۃ ص 258 باب الاجارہ)

Aap (SAW) ne un chand anbiaye karaam hi ka aswa paish nahi kya balkay aik hadees mein farmaya : Khuda ne jitne anbiaye beje hain un sab ne bakriyan churaie hain. Sahaba ne daryaft kya ke ya rasool Allah aap ne bhi bakriyan churaie hain. Farmaya haan mein bhi chand qayraton ke aiwz ahal mecca ki bakriyan churraya karta tha.

ایک صحابی نے آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے پوچھا کہ کون سی کمائی سب سے زیادہ پاکیزہ ہے آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا اپنی محنت کی کمائی۔ (مشکٰوۃ ص 242)

Aik sahabi ne aap (SAW) se poocha ke kon si kamaai sab se ziyada pakeeza hai aap s(SAW) ne farmaya apni Mehnat ki kamaai.

حدیث میں ہے کہ ایک انصاری نے آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے سامنے دست سوال دراز کیا۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ان سے پوچھا تمہارے پاس کوئی سامان ہے ؟جواب دیا ایک کمبل اور ایک پانی پینے کا پیالہ ہے۔ فرمایا اسے لے آؤ وہ لے آئے۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے صحابہ سے دریافت فرمایا کہ اس کو کون خریدتا ہے۔ ایک صحابی نے اس کی قیمت ایک درہم لگائی۔

Hadees mein hai ke aik ansari ne Anhazrat (SAW) ke samnay dast sawal daraaz kya. Aap (SAW) ne un se poocha tumahray paas koi samaan hai? Jawab diya aik kambal aur aik pani peenay ka pyalaa hai. Farmaya usay le aao wo le aeye. Aap (SAW) ne sahaba se daryaft farmaya ke is ko kon kharidata hai. Aik sahabi ne is ki qeemat aik darham lagai.

آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایااس سے زیادہ میں کوئی قیمت دے سکتا ہے ؟ایک دوسرے صحابی دو درہم قیمت دینے پر تیار ہو گئے۔ آپ نے یہ چیزیں ان کے حوالہ کیں اور دو درہم ان سے لے کر انصاری کو دے دئیے کہ ایک درہم کی کلہاڑی لے کر آؤ اور ایک درہم کا غلہ خرید کر گھر میں رکھ دو۔

Aap (SAW) ne farmaya is se ziyada mein koi qeemat day sakta hai? Aik dosray sahabi do darham qeemat dainay par tayyar ho gay. Aap ne ye cheeze un ke hawala kee aur do darham un se le kar ansari ko day dyie ke aik darham ki kulhari le kar aao aur aik darham ka ghalla khareed kar ghar mein rakh do.

انہوں نے اس کی تعمیل کی جب وہ کلہاڑی لے کر آئے اور ایک درہم کا غلہ خرید کر گھر میں رکھ دیا تو حضو ر صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے دست مبارک سے اس کلہاڑی میں دستہ لگایا اور ان کے ہاتھ میں دے کر فرمایا کہ جاؤ ا س سے لکڑی کاٹ کاٹ کر بیچو، پندرہ دن تک تم میرے پاس نہ آنا،

Unhon ne is ki tameel ki jab wo kulhari le kar aeye aur aik darham ka ghalla khareed kar ghar mein rakh diya to Hazoor(SAW) ne apne dast mubarak se is kulhari mein dasta lagaya aur un ke haath mein day kar farmaya ke jao a seen se lakri kaat kaat kar becho, 15 din tak tum mere paas na aana,

پندرہ دن کے بعد جب وہ حاضر خدمت ہوئے تو پوچھا کیا حال ہے؟ عرض کیا ا س سے میں نے دس درہم کمائے ہیں، جن میں سے چند درہم کے کپڑے خرید ے اور چند درہم سے غلہ وغیرہ خریدا ہے۔ آپ نے فرمایا کیا بھیک مانگ کر قیامت کے دن ذلت اُٹھانے سے یہ بہتر نہیں ہے۔ (مشکٰوۃ ص 163)

Pandrah din ke baad jab wo haazir khidmat hue to poocha kya haal hai? Arz kya a seen se mein ne das darham kamaye hain, jin mein se chand darham ke kapray khareed y aur chand darham se ghalla waghera khareeda hai. Aap ne farmaya kya bheek maang kar qayamat ke din zillat uthanay se ye behtar nahi hai.

ایک دن حضور سرور عالم صلی اللہ علیہ وسلم صبح کے وقت اپنے صحابہ کرام کے ساتھ تشریف فرماتھے کہ ایک قوی اورمضبوط نوجوان کو دیکھا گیا کہ وہ ذکر وفکر کی نشست میں بیٹھنے کی بجائے تیزی سے بازار کی جانب رواں دواں ہے۔صحابہ کرام نے اس پر تاسف کا اظہار کیا اورکہا کہ کاش یہ شخص کسب میں اتنی عجلت کی بجائے ذکر میں مشغول ہوتا۔

Aik din huzoor suroor aalam (SAW) subah ke waqt apne sahaba karaam ke sath tashreef farma thay ke aik quwwat aur mazbot nojawan ko dekha gaya ke wo zikar o fikar ki nashist mein bethnay ki bajaye taizi se bazaar ki janib rawan dawaan hai. Sahaba karaam ne is par tasuf ka izhaar kya aur kaha ke kash ye shakhs ksb mein itni ujlat ki bajaye zikar mein mashgool hota.

جناب رسالت مآب صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ایسانہ کہوکیونکہ اگر کوئی شخص اپنی اپنے والدین اوراپنے بال بچوں کی کفالت کی غرض سے ایسا کرتا ہے تو یہ بھی اللہ رب العزت کے راستے میں جدوجہد ہی کا ایک حصہ ہے۔

Janab risalat maab (SAW) ne farmaya aisa na kaho kyon ke agar koi shakhs apni apne walidain avrapne baal bachon ki kifalat ki gharz se aisa karta hai to ye bhi Allah rab ulizzat ke rastay mein jad-o-jehad hi ka aik hissa hai.

آپ نے یہ بھی ارشادفرمایا ہے کہ سچا اوردیانت دار تاجر قیامت کے دن صدیقین اورشہدا کے ساتھ اٹھے گا اوریہ بھی ارشاد ہے کہ (اپنے) ہاتھ سے کسب کرنے والا مسلمان اللہ کا حبیب ہے ۔نیز یہ بھی ارشادہے کہ ہاتھ سے کمائی کرنے والے کامال سب سے زیادہ حلال اورطیب ہے۔

Aap ne ye bhi irshad farmaya hai ke sacha aur diyanat daar tajir qayamat ke din sadaqeen aur shudha ke sath utthay ga avrih bhi irshad hai ke (apne ) haath se ksb karne wala musalman Allah ka habib hai. Neez ye bhi arshad hai ke haath se kamaai karne walay kamal sab se ziyada halal aur tayab hai.

صحابہ کرام رزق حلال کے لیے ہر قسم کی محنت و مشقت کرتے تھے۔ مختلف پیشوں کے ذریعہ سے اپنی روزی کماتے مثلاً حضرت خباب بن ارت لوہار تھے، حضرت عبداللہ بن مسعود چرواہے تھے، حضرت سعدبن ابی وقاص تیر سازتھے، حضرت زبیر بن عوام درزی تھے، حضر ت بلا ل بن رباح گھریلو نوکر تھے، حضر ت سلمان فارسی حجام تھے۔ حضرت عمر و بن العاص قصائی تھے۔ حضر ت علی کھیتوں میں مزدوری کرتے تھے۔

Sahaba karaam rizaq halal ke liye har qisam ki Mehnat o mushaqqat karte they. Mukhtalif pishon ke zareya se apni rozi kamate maslan Hazrat Khabaab bin Arat Lohaar they, Hazrat Abdullah bin Masood Charwahay they, Hazrat Saad bin Abi Waqas teersaaz thay, Hazrat Zubair bin Awam Darzi they, Hazrat Bilal bin Rabah gharelo nokar they, Hazar Suliman Farsi Hajjaam they. Hazrat Umar o bin Aaas Qasai they. Hazrat Ali khaiton mein mazdoori karte they.

حضرت ابوبکر کپڑا بیچتے تھے۔ خلیفہ بن جانے کے بعد بھی وہ کپڑوں کی گٹھڑی کمر پر لاد کر گھر سے نکلے تو راستہ میں حضرت عمر اور ابو عبیدہ ملے انہوں نے کہا اب آپ یہ کام کیسے کر سکتے ہیں آپ تو اب مسلمانوں کے معاملات کے والی ہیں۔ انہوں نے جواب دیا اپنے بال بچوں کو کہاں سے کھلاؤں ؟

Hazrat Abu Baker kapra baichtay they. Khalifa ban jaane ke baad bhi wo kapron ki gthrhi kamar par laad kar ghar se niklay to rasta mein Hazrat Umar aur Abbu Ubaida miley, unhon ne kaha ab aap ye kaam kaisay kar satke hain aap to ab musalmanoon ke mamlaat ke wali hain. Unhon ne jawab diya apne baal bachon ko kahan se khilaun ?

ازواج مطہرات گھروں میں اُون کاتتی تھیں، کھالوں کی دباغت کرتی تھیں۔ حضرت زینب کھالوں کی دباغت کرتی تھیں۔ (اسلام کا نظام تعلیم ص52)حضرت اسماء بنت ابی بکر جانوروں کی خدمت اور جنگل سے لکڑیاں چن کر لا نے کا کام کرتی تھیں (صحیح البخاری ج 3 ص121)کچھ خواتین کھانا پکا کر فروخت کر نے کا م کرتی تھیں (صحیح البخاری کتاب الجمعہ باب فاذاقضیت الصلوۃ ج1 ص128)

Azwaaj mutahrat gharon mein uoon kanti theen, khaalon ki dabaghat karti theen. Hazrat Zainab khaalon ki dabaghat karti theen. Hazrat Asma bint Abi Baker janwaron ki khidmat aur jungle se lakdiyaan chunn kar laa ne ka kaam karti theen, kuch khawateen khana pakka kar farokht kar ne ka m karti theen

کچھ دودھ نکال کر فروخت کرتی تھیں۔ (ابن عبدالحکم کی سیرت عمر بن عبدالعزیز مترجم ص12۔ 13) کچھ دایہ کا کام کرتی تھیں (صحیح البخاری، کتاب الطلاق) کچھ بچوں کا ختنہ کرتی تھیں (سلطان احمد کی اسلام کا نظریہ جنس ص 251)، کچھ زراعت کرتی تھیں (بخاری ج 1 ص 554)، کچھ تجارت کرتی تھیں (بخاری ج1 ص752)، کچھ خو شبو فروخت کرتیں تھیں کچھ کپڑا بنتی تھیں (بخاری ج1 ص735)

Kuch doodh nikaal kar farokht karti theen. Kuch daya ka kaam karti theen, kuch bachon ka khatna karti theen, kuch zaraat karti theen, kuch tijarat karti theen, kuch khoo shabo farokht kartin theen kuch kapra banti theen

کچھ بڑھئی کا کام کرتی تھیں (بخاری ج 1 ص736)۔ حضرت عائشہ نے زینب بنت حجش زوجہ رسولﷺ کے بارے میں فرمایا۔ ” تعمل بید ھاوتصدق ” وہ اپنی محنت سے کماتیں اور للہ کی راہ میں صدقہ کرتیں تھیں (صحیح مسلم کتاب فضائل الصحابہ ج 3 ص554)۔

محنت کا رجحان تب پیدا ہوتا ہے جب رول ماڈل محنتی ہو۔ محنت کا رجحان تب پیدا ہوتا ہے جب اردگرد مثالیں ہوں۔ خندق کا میدان ہے سرکار دوعالم ﷺ کے پاس ایک صحابی آئے اور کہنے لگے یارسول اللہ ﷺ بھوک کی شدت کی وجہ سے میں نے اپنے پیٹ پر پتھر باندھا ہوا ہے ۔آپﷺ نے ان کو اپنا پیٹ مبارک دکھاتے ہوئے فرمایا یہ دیکھوں میں نے دو باندھےہیں۔ سوچنے کی بات ہے اس صحابی رسول کی موٹیویشن کا کیا لیول ہوگا جنہوں نے سرکار دوعالم ﷺ کو پیٹ مبارک پر دو پتھر باندھے ہو ئے دیکھا ہوگا۔

Mehnat ki azmat aur barkat Quran hadees ki roshni mein, Mehnat ki azmat essay, speech note and story in Urdu, Mehnat mein azmat hai, mehnat ki barkat aur fawide Urdu and hindi mein

محنت کرنے والا کئی محنت کرنے والوں کو پیدا کرتا ہے۔ آج ہماری نوجوان نسل کا مسئلہ یہ ہے کہ آج ان کے پاس کوئی رول ماڈل نہیں ہے۔ اگر پچھلے بیس سالوں کو دیکھا جائے تو ہمارے ملک میں جتنے بھی سیاستدان آئے ان کا کردار ایساتھا کہ ان پرسے اعتبار نہیں بن سکا۔

آج کے نوجوان کے پاس اچھی مثالیں نہیں ہیں۔ وہ تمام لوگ جنہوں نے کسی تحریک میں کام کیا ہو انہیں صحیح محنت کی عظمت کا پتا ہوتا ہے ۔ تحریک سے وابسطہ ہونے سے محنتی مزاج پیدا ہوتا ہے کیونکہ جب لیڈر محنتی ہوتو ٹیم بھی محنت کرناشروع کری دیتی ہے۔ جب تک ہمارے ادارے ، ہمارے سکولز، ہماری یونیورسٹیاں اور ہمارے کالجزاس ایجنڈ ا کو نہیں سامنے رکھتے تب تک محنتی لوگ پیدا نہیں ہوں گے۔

Mehnat Kamyabi ka raaz aur kamyabi ki kunji hai, Mehnat karne se sub kuch hasil ho jata hai

اسلام نے جو ذہنیت پیدا کی تھی اس کی وجہ سے اس زمانہ میں کوئی شخص بھی بے کار رہنا پسند نہیں کرتا تھا چنانچہ صحابہ میں بہت کم ایسے لوگ تھے جو کسی نہ کسی پیشہ سے وابسطہ نہ ہوں۔ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے صحابہ میں یہ عام جذبہ پیدا کر دیا تھا کہ وہ کسی پر اپنا معاشی بار ڈالنا پسند نہیں کرتے تھے۔

Islam ne jo zehniat peda ki thi is ki wajah se is zamana mein koi shakhs bhi be car rehna pasand nahi karta tha chunancha sahaba mein bohat kam aisay log they jo kisi na kisi pesha se vaabasta na hon. Anhazrat (SAW) ne sahaba mein ye aam jazba peda kar diya tha ke wo kisi par apna muashi baar daalna pasand nahi karte they.

محنت کی عظمت مضمون اردو میں، محنتی لوگ ہی کامیاب ہوتے ہیں کیونکہ محنت کامیابی کی کنجی ہے۔

یاد رکھئیے کہ جوانی میں آرام پرستی اور آسان راستوں (شارٹ کٹس) کا انتخاب سستی،لا پروائی اور کم ہمتی کی علامت ہے۔ بے شک اسی طرز سے زندگی گزاریئے مگر یہ یاد رکھیئے کہ نہ تو آپ کسی تاریخ کا حصہ بننے جا رہے ہیں اور نہ ہی کسی نے آپ کو یاد رکھنا ہے۔ آپ کی زندگی ، آپ کا وجود ، آپ کا فنا ہو جانا اور آپ کی موت اس دنیا کیلئے بے مقصد اور فضول ہے۔

Yaad rakhyie ke jawani mein aaraam parasti aur aasaan raastoon (Short Cut) ka intikhab susti, laa parwai aur kam himmati ki alamat hai. Be shak isi tarz se zindagi guzariye magar ye yaad rkhiye ke na to aap kisi tareekh ka hissa ban’nay ja rahay hain aur na hi kisi ne aap ko yaad rakhna hai. Aap ki zindagi, aap ka wujood, aap ka fanaa hojana aur aap ki mout is duniya ke liye be maqsad aur fuzool hai.

اللہ ہمیں خیر و برکت سے نوازے اب بھی وقت ہے کہ اُٹھ کھڑے ہوں، ہمت کے اسلحہ اور عزم کی ڈھال اُٹھا کر، تھکن کو بھلا کر محنت کے ساتھ، تاکہ آئندہ کی زندگی خوشیوں کے ساتھ گزرے اور عظمت کے ساتھ موت کا سامنا ہو۔

Allah hamein kher o barket se nawaze ab bhi waqt hai ke uth kharray hon, himmat ke asleha aur azm ki dhaal uttha kar, thakan ko bhala kar Mehnat ke sath, taakay aindah ki zindagi khoshion ke sath guzray aur azmat ke sath mout ka saamna ho.

شیئر کریں